اے قلم میرے نام محمد ؐ  ذرا لکھنا   

اے قلم میرے نام محمد ؐ  ذرا لکھنا   
اے قلم میرے نام محمد ؐ  ذرا لکھنا   

  

اللہ تعالی نے اِنسان کی جسمانی اور روحانی ضروریات کے مطابق جہاں اس کے مادی اور جسمانی حوائج کی تکمیل کا اہتمام کیا وہاں بقائے حیات کی خاطر اسے ایسی ہدایت و رہنمائی سے بھی بہرہ ور فرمایا جس سے وہ اپنی اخلاقی و روحانی زندگی کے تقاضوں سے کماحقہ عہدہ بر ا  ہو سکے، رشد و ہدایت کا وہ نورانی و روحانی سفر جس کی اِبتدا بنی نوع انسان کے جد امجد حضر ت آدم علیہ السلام کی آفرینش سے ہوئی، یہ سفر مسلسل جاری رہا یکے بعد دیگرے مختلف انبیا کرام علیہم السلام کے ذریعے بھٹکی ہوئی نسلِ انسانی کو راہِ ہدایت سے ہم کنار کرتا رہا، لیکن تاریخِ انسانی پر ایک ایسا وقت بھی آیا جب تہذیب و تمدن کا نام بھی باقی نہ رہا اور ظلم و بربریت کے شکنجوں میں جکڑی اِنسانیت،شہنشاہیت اور جابرانہ آمریت کے دو پاٹوں کے درمیان بری طرح پسنے لگی، جب تاریخِ انسانی کی طویل ترین رات اپنی ہیبت کی انتہا کو پہنچ گئی تو  ظلمتِ شب کے دامن سے ایک ایسی صبحِ درخشاں طلوع ہوئی جو قیامت تک کے لیے غیر فانی اور سرمدی اجالوں کی نقیب بن گئی،بلادِ حجاز کی مقدس فضائیں نعرہ توحید کی صداؤں سے گونجنے لگیں، وادی مکہ میں اس  ہستی کا ظہور ہوا جس کے لیے چشمِ فلک ابتدائے آفرینش سے منتظر تھی اور روحِ عصر جس کے نظارے کے لیے بے قرار تھی۔امام احمد رضا  نے اس پر کیا خوب کہا صبح طیبہ میں  ہوئی بٹتا ہے باڑا نور کا صدقہ لینے نور کا آیا ہے  تارا  نور کا     سرورِ کائنات صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ذاتِ ستودہ صفات نے اِس خاک دان دنیا کا مقدر بدل ڈالا، انسانی تہذیب و تمدن کے بے جان جسم میں وہ روح پھونک دی جس سے تاریخ انسانی کے ایک نئے دور کا آغاز ہوا،محسنِ اِنسانیت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے وجودِ اقدس میں حسن وجمالِ ایزدی کے جملہ مظاہر اپنی تمام تر دل آویزیوں اور رعنائیوں کے ساتھ یوں جلوہ گر ہوئے کہ تمام حسینانِ عالم کے سراپے ماند پڑ گئے۔ عاشق مصطفی،اعلی حضرت امام احمد رضا نے اس پر بھی خوب کہا 

جس سے تاریک دل جگمگانے لگے

اس چمک والی رنگت پہ لاکھوں سلام

مرزا غالب نے  فارسی میں  نعت نبی کہی  ہے،اس کے آخری شعر میں انہوں نے مدحت کا حق ادا کر دیا،

غالب ثنائے خواجہ  با یزداں  گزاشتم

کاں ذات پاک  مرتبہ دان محمد است

غالب نبی کریم کی تعریف و توصیف صرف خدا تعالی کی ذات بیان کر سکتی ہے کہ وہی ان کے مرتبہ و مقام سے پوری طرح آگاہ ہے

سی پی این ای کے موجودہ  صدراور ڈیلی ٹائمز کے ایم ڈی کاظم خان  میں ہزاروں گن اپنی جگہ مگر انکی اس نعت کی وجہ سے  میرے دل  میں انکی عزت اور بڑھ گئی ہے،مشہور صحافی،کالم نگار اور ڈیجیٹل میڈیا کے استاد نعیم ثاقب  کا میں شکر گزار ہوں جن کے توسط سے یہ نعت مجھ تک پہنچی،یہ نعت کاظم خان نے کوئی تئیس چوبیس سال پہلے کہی تھی،آپ بھی پڑہیے اور سر دھنیے

اے قلم میرے نام محمدؐ ذرا لکھنا

ٹھہرو

پہلے میرے چہرے کو زم زم سے غسل دو

آنکھوں کو میری طور کے سرمے سے سجا دو

پلکیں میری یثرب کے گلی کوچے بنا دو

پھر جسم میرے کو کوئی پھولوں کی قبا دو

پھر عرش بریں کی کسی مسند پہ بٹھا دو

خالق نے خلق جو جو کیا سب کو بلا لو

اس نام کی تکریم میں سب سر کو جھکا لو

دو  ان کا وسیلہ کہ جہنم سے بچا لو

پھر کہنا مجھے

نام محمدؐ ذرا لکھنا  

    میلادِ مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی اِس صبح اولیں سے اب تک چودہ صدیوں سے زیادہ کا عرصہ بیت چکا ہے لیکن آج بھی جب اس عظیم ترین ہستی کے پردہ عالم پر ظہور کا دن آتا ہے تو مسلمانانِ عالم میں مسرت کی لہر دوڑ جاتی ہے،ماہِ ربیع الاول کا ایک  مقدس دن اتنی صدیاں 

 گزر جانے کے بعد بھی نویدِ جشن لے کر طلوع ہوتا ہے اور مسلمانوں کا سوادِ اعظم اس روزِ سعید کو بڑھ چڑھ کر مناتا ہے،ہر عاشق اپنے اپنے طور اور قرینے سے عشق و الفت کا اظہار کرتا ہے،کہیں غریبوں میں نیاز تقسیم ہو رہی ہے،کہیں پانی شربت اور دودھ کی سبیل لگی ہے،گلیاں بازار دلہن کی طرح سجائے جاتے ہیں،چراغاں ہوتا ہے،قمقمے روشن کئے جاتے ہیں،جلوس نکلتے ہیں،چوکوں چوراہوں عمارات پر لائٹنگ کر کے خوشی کا اظہار کیا جاتا ہے۔

      مذہبی تہواروں اور چنیدہ ہستیوں کا یوم ولادت مناناکوئی نئی بات نہیں،مسیحی حضرت عیسیٰ  ؑکے جنم دن کو باقاعدہ عید کا درجہ دیتے ہیں،جسے ہم پاکستان میں بھی بڑا دن  کے طور پر جانتے ہیں  یہود بھی حضرت موسیٰ علیہ السلام کے دور میں اللہ پاک کی طرف سے انعامات کی یاد میں خوشی کا اظہار کرتے ہوئے ان ایام کو جشن کے طور پر مناتے ہیں،محسن انسانیت محمدؐ  کی آمد تو دراصل عالمین کیلئے رحمت تھی، اللہ پاک نے خود قرآن میں فرمایارسولؐ اللہ کی بعثت دراصل دنیا والوں کیلئے رحمت ہے، دوسری جگہ ارشاد ہے ہم نے آپ کو(نبی کریمؐ)دونوں جہانوں کیلئے رحمت بنا کر بھیجا ہے مقام و مرتبہ یہ کہ اللہ رب العزت فرماتے ہیں اللہ تعالیٰ اور فرشتے نبی کریمؐ پر درود و سلام بھیجتے ہیں اے  لوگو جو ایمان لائے ہو تم بھی (نبی صلعم) پر درود بھیجو میں قبول کروں گاآقائے نامدارﷺ کو خراج عقیدت پیش کرنے کا بہترین قرینہ تو درود پاک کا ورد ہے،جن پر خود اللہ کریم درود بھیجے اور یہ واحد عبادت ہے جس کے بارے میں عمل سے پہلے ہی یقین دہانی ہے کہ مومنو! تم درود بھیجو میں تسلیم کروں گا،اگر چہ بہت سے عاشق درود پاک کا ورد بھی کرتے ہیں مگر زیادہ تر خوشی کا اظہار کرتے اس اہم کام کو بھول جاتے ہیں جس کا حکم اللہ نے دیا اور جو کام اللہ پاک خود کرتے ہیں۔

میلاد النبیؐ پر مسرت کا اظہار عشق مصطفی   ؐکا تقاضا ہے مگر اظہار عشق کے کچھ عملی تقاضے ہیں جن کو ہماری اکثریت فراموش کر چکی ہے،عشق کا عملی ثبوت یہ ہے کہ ہم نبی پاک صلعم کی تعلیمات کو حرز جان بنا لیں، نماز کو دین کا بنیادی ستون اور مومن و کافر میں فرق قرار دیا اور رحمت اللعالمینؐ نے لازمی  قرار دیا مگر ہم نے نماز سے غفلت کو معمول بنا لیا ہے،فرمایا مومن اور کافر میں تین باتوں کا فرق ہے،مومن جب بولتا ہے سچ بولتا ہے،عہد کی پابندی کرتا ہے اور امانت میں خیانت نہیں کرتا مگر کیا ہم نے ان خصائص سے  دوری کی دانستہ کوشش نہیں کی؟رشتے داروں ہمسایوں کے حقوق پر رسالتؐ ماب نے بہت زور دیا مگر ہم نے ان حقوق کی ادائیگی سے ہمیشہ پہلو تہی کی،ہمیں قطع تعلقی سے منع فرمایا گیا اور صلہ رحمی کا حکم دیا گیا مگر ہم نے ان دونوں باتوں کو بھی  فراموش کر دیا،خوشی کا اظہار اپنی جگہ لیکن اگر ہمارے اعمال پر نگاہ ڈالی جائے تو ہم حقیقی عاشق رسولؐ دکھائی نہیں دیتے اس لئے ضروری ہے کہ ہم اپنے کردار و اخلاق کا جائزہ لیں اور اسے تعلیمات محمدیﷺ کے مطابق ڈھالنے کا عہد کریں۔

مزید :

رائے -کالم -