آسٹریلیا‘قدیم مقامی باشندوں کو آئینی حیثیت دینے کاریفرنڈم ملتوی

آسٹریلیا‘قدیم مقامی باشندوں کو آئینی حیثیت دینے کاریفرنڈم ملتوی

سڈنی (اے پی پی) آسٹریلیا کی حکومت نے مناسب عوامی تعاون نہ ہونے کے باعث قدیم باشندوں کو آئینی حیثیت دینے کے حوالے سے ریفرنڈم کے انعقاد کا منصوبہ ملتوی کر دیا۔ قدیم مقامی باشندوں کے امور کے آسٹریلوی وزیر جینی میکلن کا کہنا ہے کہ ریفرنڈم کا منصوبہ دو سے تین سال کیلئے ملتوی کیا گیا ہے کیونکہ اس حوالے سے حکومت کو مناسب عوامی و پارلیمانی حمایت حاصل نہیں تھی۔ ان کا کہنا تھا کہ ریفرنڈم کے التواءسے مجھے، حکومت بلکہ پوری قوم کو دکھ پہنچا ہے مگر عوامی حمایت نہ ہونے کے باعث ایسا کرنا ممکن نہیں تھا۔ انہوں نے کہا کہ ہر شخص کی خواہش ہے کہ یہ قانون جلد از جلد منظور ہو جس سے آسٹریلیا کے قدیم باشندوں کو بھی دیگر افراد کی طرح برابر کے حقوق ملیں۔ ادھر وزیراعظم جولیا گیلارڈ جو کہ اس منصوبے کی محرک ہیں کا کہنا ہے کہ اس قانون کے تحت 1788ءمیں آسٹریلیا میں سفید فام نسل کے باشندوں کی آمد کے بعد مقامی باشندوں سے ہونے والی مسلسل زیادتیوں کا ازالہ کیا جائے گا۔ یاد رہے کہ 1999ءمیں ملک کو جمہوریہ قرار دینے کے حوالے سے منعقدہ ریفرنڈم کی ناکامی کے بعد اب تک آسٹریلیا میں کوئی ریفرنڈم منعقد نہیں ہو سکا۔

مزید : عالمی منظر