کشمیری رہنما ءسید عبدالرحمن گیلانی کا سکاٹ لینڈ طرز کا ریفرنڈم ہمالیائی خطے میں کرانے کا مطالبہ

کشمیری رہنما ءسید عبدالرحمن گیلانی کا سکاٹ لینڈ طرز کا ریفرنڈم ہمالیائی خطے ...

  

سرینگر(این این آئی) مقبوضہ کشمیر کے معروف رہنماءسید عبدالرحمن گیلانی نے سکاٹ لینڈ طرز کا ریفرنڈم ہمالیائی خطے میں بھی کرانے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ آزادی منتخب کرنا بنیادی حق ہے جو کسی قوم سے چھینا نہیں جاسکتا۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق کشمیری رہنماءسید عبدالرحمن گیلانی نے کہا کہ سکاٹ لینڈ ریفرنڈم میں 55 فیصد اکثریتی ووٹروں کے آزادی کو مسترد کرنے سے پتا چلتا ہے کہ برطانیہ میں جمہوری کردار زندہ ہے، انہوں نے مطالبہ کیا کہ ہمالیائی خطے میں بھی سکاٹ لینڈ طرز کا ریفرنڈم کرایا جانا چاہئے، انہوں نے کہا کہ آزادی منتخب کرنا بنیادی حق ہے جو کسی قوم سے چھینا نہیں جانا چاہیے جیسا کہ بھارت گزشتہ چھ دہائیوں سے کشمیر میں کررہا ہے یہ غیر انسانی فعل ہے ۔انہوں نے کہا کہ بھارت کو برطانیہ سے سیکھنا چاہیے اور کشمیر کو بھی حق خود ارادیت حاصل ہونا چاہئے ،بھارتی اخبارات کے مطابق نئی دہلی فکر مند ہے کہ اگر سکاٹش ووٹ علیحدگی کے حق میں جاتے تو یہ کشمیر اور شمال مشرق میں آزادی کی تحریکوں کیلئے ایندھن کا کام کریگا۔

آزاد کشمیر میں حزب اللہ مجاہدین کے رہنماءعزیر احمد غزالی نے بھی برطانیہ کو سکاٹ لینڈ میں ووٹروں کو ان کے مستقبل کا فیصلہ کرنے کےلئے اجازت دینے کے برطانیہ کے اقدام کو سراہا ہے۔انہوں نے کہا کہ برطانیہ کا یہ ریفرنڈم کشمیر کی تحریک آزادی کےلئے ایک رول ماڈل ہو گا ۔حریت رہنما سید علی گیلانی نے ایک انٹرویو میں کہا کہ جمہوری کرادار اب بھی برطانیہ میں زندہ ہے، آزادی کا انتخاب کرنا ہر انسان کا بنیادی حق ہے اور اسے کسی بھی قوم سے نہیں چھیننا چاہئے جبکہ بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں یہ غیر جمہوری رویہ گذشتہ 60 سال سے اختیار کر رکھا ہے جو غیرانسانی ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت برطانیہ کے اس طرز عمل سے سبق سیکھتے ہوئے کشمیریوں کو بھی حق خود ارادیت دے۔حزب المجاہدین کے رہنما عزیر احمد نے بھی اسکاٹ لینڈ ریفرنڈم کو سراہتے ہوئے کہا کہ اس ریفرنڈم کو کشمیری جددوجہد کے لیے رول ماڈل بنانا چاہئے۔واضح رہے کہ مقبوضہ کشمیر کے لوگ گذشتہ 6 دہائیوں سے استصواب رائے کا حق مانگ رہے ہیں اوراس کےلئے جاری تحریک میں اب تک ہزاروں کشمیری اپنی جانوں کا نذرانہ بھی پیش کرچکے ہیں لیکن اقوام متحدہ کی قراردادوں کے باوجود بھارت کشمیر میں استصواب رائے کرانا کےلئے تیار نہیں۔

مزید :

عالمی منظر -