بڈھ بیڑ بیس پر حملے میں افغان سرزمین کا استعمال ، آرمی چیف کا دورہ افغانستان متوقع

بڈھ بیڑ بیس پر حملے میں افغان سرزمین کا استعمال ، آرمی چیف کا دورہ افغانستان ...

اسلام آباد (خصوصی رپورٹ) پشاور کے علاقے بڈ بیڑ میں پاکستان ایئر فورس کی بیس پر دہشتگرد حملے میں افغان سرزمین کے استعمال ہونے کے انکشاف کے بعد آرمی چیف جنرل راحیل شریف کا دورہ افغانستان متوقع ہے۔انتہائی باوثوق ذرائع کا دعویٰ ہے کہ جنرل راحیل شریف ایک اعلیٰ سطحی وفد کی قیادت میں کابل جائیں گے جہاں وہ افغان صدر اشرف غنی سے ملاقات کریں گے۔ اس ملاقات میں بڈ ھ بیڑ ایئر بیس پر حملے میں افغان سرزمین کے استعمال ہونے سے متعلق ثبوت افغان قیادت کے حوالے کئے جائیں گے۔ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ آرمی چیف افغانستان کے مختلف مقامات پر موجود تحریک طالبان پاکستان کے ٹھکانوں کی ایک فہرست بھی افغان حکومت کے حوالے کریں گے اور ان سے مطالبہ کریں گے تحریک طالبان پاکستان کے خلاف سخت ترین کاروائی کی جائے۔دوسری جانب وزیر اعظم کے مشیر برائے خارجہ امور سرتاج عزیز نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ جلد افغانستان کو ایسے ٹھوس ثبوت پیش کئے جائیں گے جن کی بنیاد پر تحریک طالبان پاکستان کیخلاف کاروائی کا مطالبہ کیا جائے گا۔ انتہائی مصدقہ ذرائع کا کہنا ہے کہ آرمی چیف افغان قیادت سے آئی ایس آئی اور افغان انٹیلی جنس کے مابین طے شدہ ایم او یو پر عمل درآمد پر بھی زور دیں گے۔ واضح پاکستان کی جانب سے بڈھ بیڑ حملے کے بعد دعویٰ کیا گیا تھا کہ حملے کی منصوبہ بندی اور تیاری افغان سرزمین پر کی گئی ہے۔ تاہم افغان صدرارتی ترجمان نے اس کی تردید کرتے ہوئے کہا تھا کہ افغانستان خود دہشتگردی کا ستایا ہوا ملک ہے وہ کیونکر کسی دوسری ملک میں دہشتگردی کو پروان چڑھائے گا۔

مزید : صفحہ اول