ہائی کورٹ :بجلی کے بلوں پر عائد اضافی سرچارجز کے خلاف درخواست پر نوٹس جاری

ہائی کورٹ :بجلی کے بلوں پر عائد اضافی سرچارجز کے خلاف درخواست پر نوٹس جاری
ہائی کورٹ :بجلی کے بلوں پر عائد اضافی سرچارجز کے خلاف درخواست پر نوٹس جاری

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی ) لاہور ہائی کورٹ کے مسٹر جسٹس شمس محمود مرزا نے بجلی کے بلوں پر عائد اضافی سرچارجز کے خلاف دائر درخواست پر وفاقی حکومت اور نیپراسمیت دیگرمدعاعلیہاں کو نوٹس جاری کرتے ہوئے 23 ستمبر تک جواب طلب کرلیا ہے۔عدالت میں درخواست گزارکے وکیل محمد اظہرصدیق نے موقف اختیارکیا کہ کہ نیپرا ایکٹ کے سیکشن 31کا ذیلی سیکشن 5 آئین سے متصادم ہے۔

نیپرا قانون سازادارہ نہیں ہے اوروہ کسی قسم کے سرچارج کی وصولی کا کوئی اختیار نہیں رکھتا۔ وکیل نے کہا کہ عدالتی حکم کے باوجود جون سے بجلی کے بلوں میں نیلم جہلم سرچارج سمیت تین اقسام کے سرچارجز غیرقانونی عائد کردئیے گئے ہیں. انہوں نے استدعا کی کہ بجلی کے بلوں میں تین اضافی سرچارجزکو کالعدم قراردیا جائے ،عدالت نے وفاقی حکومت،نیپرا اور وزارت پانی و بجلی کو نوٹس جاری کرتے ہوئے 23ستمبرکو جواب طلب کرلیا ہے۔

اس سے قبل مسٹرجسٹس اعجازالاحسن نے بجلی کے بلوں میں عائداضافی سرچارجزکے خلاف اس درخواست کی سماعت سے معذرت کرلی تھی جس پر چیف جسٹس نے یہ کیس سماعت کے لئے مسٹر جسٹس شمس محمود مرزا کو بھجوا دیا ۔

مزید : لاہور