برطانوی خاتون وزیراعظم نے ایسی تیاری مکمل کرلی کہ اب برطانیہ میں ’سیاسی پناہ‘لینا خواب بن جائے گا

برطانوی خاتون وزیراعظم نے ایسی تیاری مکمل کرلی کہ اب برطانیہ میں ’سیاسی ...
برطانوی خاتون وزیراعظم نے ایسی تیاری مکمل کرلی کہ اب برطانیہ میں ’سیاسی پناہ‘لینا خواب بن جائے گا

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانوی وزیراعظم تھریسامے نے ایسے اقدام کی تیاری مکمل کر لی ہے کہ اب پناہ گزینوں کا روپ دھار کر برطانیہ پہنچنے والوں کے لیے سیاسی پناہ لینا ناممکن ہو جائے گا۔

برطانوی اخبار ڈیلی میل کی رپورٹ کے مطابق تھریسامے میں اپنے اقوام متحدہ کے پہلے اجلاس میں شرکت کے لیے نیویارک میں موجود ہیں اور ممکنہ طور پر آج وہ عالمی رہنماﺅں سے خطاب کریں گی۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ تھریسامے برطانیہ کا بارڈر کنٹرول کرنے اور پناہ گزینوں کے مسئلے پر گفتگو کریں گی۔ وہ عالمی رہنماﺅں کو بتائیں گی کہ برطانیہ اپنے بارڈرز محفوظ بنانے کا حق رکھتا ہے اور معاشی نقل مکانی کرنے والے لاکھوں افراد جو پناہ گزینوں کا روپ دھار کر برطانیہ میں سیاسی پناہ کی درخواستیں دے رہے ہیں ان کی درخواستیں مسترد کرنے کا اعلان کریں گی۔ وہ عالمی رہنماﺅں کو بتائیں گی کہ لاکھوں کی تعداد میں پناہ گزینوں کا یورپ پہنچنا برطانیہ کے مفادات کے منافی ہے۔ یہ عمل معاشی مہاجرین اور ان کے آبائی ملکوں کے بھی مفاد میں نہیں ہے۔

’ہم نے آپ کو دھوکہ دیا، انہیں دراصل ہم ہی پیسے دیتے رہے‘ سعودی عرب کی اعلیٰ شخصیت نے امریکی سفارتکار سے ایسی بات کہہ دی کہ سن کر سانس لینا بھول گیا، ایسا کیا کہا؟ جان کر آپ بھی دم بخود رہ جائیں گے

رپورٹ کے مطابق اقوام متحدہ کی طرف سے برطانیہ پر دباﺅ ڈالا جا رہا ہے کہ وہ پناہ گزینوں کے لیے اپنے بارڈر کھول دے۔ تھریسامے اس خطاب میں اقوام متحدہ کا یہ دباﺅ مسترد کر دیں گی اور عالمی رہنماﺅں کو باور کرائیں گی کہ برطانیہ کو اپنے بارڈر محفوظ رکھنے کا پورا حق حاصل ہے۔ رپورٹ کے مطابق تھریسامے نے اپنے خطاب کی تمام تیاری مکمل کر رکھی ہے جس میں وہ پناہ گزینوں کے اس بحران میں عالمی رہنماﺅں کے عدم تعاون پر بھی تنقید کریں گی جس کے باعث یہ بحران قابو سے باہر ہوتا جا رہا ہے۔

ڈیلی میل کے مطابق اگربرطانیہ پر عوام کی طرف سے پناہ گزینوں کے لیے بارڈر کھولنے کا دباﺅ جاری رہا تو حکومت اس نظام میں اصلاحات لا کر اسے مزید سخت کر سکتی ہے تاکہ معاشی مہاجرین کسی بھی طرح سیاسی پناہ گزینوں کا روپ دھار کر برطانیہ میں پناہ نہ لے سکیں۔

مزید :

برطانیہ -