مقبوضہ کشمیر میں بھارت کے مظالم اور بربریت کا ردعمل آتارہے گا ، پاکستان

مقبوضہ کشمیر میں بھارت کے مظالم اور بربریت کا ردعمل آتارہے گا ، پاکستان

  

 نیویارک(اے این این) پاکستان نے مقبوضہ کشمیر میں بھارت کے بٹالین ہیڈ کوارٹر پر حملے الزامات ایک بار پھر مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ وادی میں بھارتی مظالم کا رد عمل آتا رہے گا،ہم نے خطے میں ہمیشہ امن کی کوشش کی ہے ،بھارت الزامات کی بجائے مسئلہ کشمیر کے حل پر توجہ دے،یہ مسئلہ حل ہوگا تو ساری راہیں کھلیں گی،ہم مقبوضہ کشمیر کے حوالے سے کسی دباؤ میں نہیں آئیں گے،بھارت کے دھمکی آمیز بیانات سے خطے کے امن کو خطرہ ہے،عالمی برادری نوٹس لے،مقبوضہ کشمیر کے معاملے پر صورتحال جنگ کی طرف نہیں جانی چاہیے ۔نیویارک میں اقوم متحدہ کی جنرل اسمبلی کے71ویں سربراہی اجلاس کی سائیڈ لائن پر پریس کانفرنس سے خطاب میں سیکرٹری خارجہ اعزاز احمد چوہدری نے اقوام متحدہ میں پاکستان کی مستقل مندوب ملیحہ لودھی کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کیا ہے ۔اپنے خطاب میں انھوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں فوجی کیمپ پر حملے سے متعلق باھرت کے الزامات بے بنیاد ہیں جب آپ ظلم کریں گے تو اس کا رد عمل تو آنا ہے ،مقبوضۃ وادی میں بھارتی ظلم و بربریت کا ردعمل سامنے آتا رہے گا۔انھوں نے کہا کہ بھارت کے دھمکی آمیز بیانات سے علاقائی امن کو خطرات لاحق ہیں ،عالمی برادری کو اس کا نوٹس لینا چاہیے۔مقبوضہ کشمیر کے معاملے پر صورتحال جنگ کی طرف نہیں جانی چاہیے،پاکستان کی ہمیشہ امن کی خواہش اور کوشش رہی ہے ۔کشمیری اور پاکستانی عوام کی آواز عالمی فورم پر اٹھانا پاکستانی حکومت کی ذمے داری ہے۔انھوں نے کہا کہ بھارت کوچاہیے کہ پاکستان پرالزامات لگانے کے بجائے مسئلہ کشمیر پر توجہ دے، امریکا مقبوضہ کشمیر کے معاملے میں کرداراداکرسکتاہے۔انھوں نے میڈیا بریفنگ میں وزیر اعظم نواز شریف کی مصروفیات سے بھی آگاہ کیا اور بتایا کہ وزیراعظم سے ملاقات میں جان کیری نے انسداددہشت گردی کیلیے پاکستانی کوششوں کوتسلیم کیا ہے ۔ وزیراعظم نے جان کیری کو نہ صرف مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم سے آگاہ کیا بلکہ دونوں رہنماؤں کے درمیان افغانستان کے مسئلے پر بھی بات ہوئی۔سیکریٹری خارجہ نے کہا کہ وزیراعظم کی برطانوی ہم منصب سے بھی کشمیر کے مسئلے پر بات ہوئی جب کہ سعودی ولی عہد سے ملاقات میں مسلم دنیا کو درپیش چیلنجز پر بات کی گئی ہے۔انہوں نے کہا کہ اوآئی سی کے کشمیر پررابطہ گروپ کا اہم اجلاس ہوا ہے اور وزیراعظم نواز شریف نے مسلم دنیا کو کشمیر کے ایشو پر اکٹھا کرنے کی کوشش کی جب کہ کشمیری عوام کی آوازبین الاقوامی برادری تک پہنچانا ہمارا اخلاقی فرض ہے۔اس موقع پر اقوام متحدہ میں پاکستان کی مستقل مندوب ملیحہ لودھی نے کہاکہ مقبوضہ کشمیرکے حوالے سے کسی دباو میں نہیں آئیں گے ۔ بھارت کو کشمیری عوام کی آواز سننے کی ضرورت ہے لہذا بھارت پاکستان پر الزام لگانے کے بجائے مسئلہ کشمیر پر توجہ دے۔ دریں اثناء نجی ٹی وی سے گفتگو میں سیکرٹری خارجہ اعزاز احمد چوہدری نے کہا کہ پاکستان کی ہمیشہ امن کی خواہش اور کوشش رہی ہے ۔ان کا کہنا تھا کہ پاکستانی قیادت اور عوام وطن کا دفاع کرنا جانتی ہے۔ اس وقت سب سے اہم کام کشمیر کی صورتحال کا مداوا کرنا ہے ۔ کشمیر کا مسئلہ حل ہو جائے تو ساری راہیں کھل جائیں گی۔خطے میں پائیدار امن ہوگا جس سے ترقی ہوگی اور عوام کا معیار زندگی بلند ہو گا۔

مزید :

صفحہ اول -