کرک،14کروڑ کے ٹینڈرمن پسند ٹھیکیداروں میں بھاری کمیشن کے عوض تقسیم ہونیکا انکشاف

کرک،14کروڑ کے ٹینڈرمن پسند ٹھیکیداروں میں بھاری کمیشن کے عوض تقسیم ہونیکا ...

  

کرک (بیورورپورٹ) ٹی ایم اے بانڈہ داؤد شاہ کے 14کروڑ روپے کے ٹینڈربغیر اوپننگ کے من پسند ٹھیکیداروں میں بھاری کمیشن کے عوض تقسیم ہونے کا انکشاف چیف انجینئر،سیکرٹری بلدیات کو دی جانیوالی درخواستیں بھی بے سود ثابت ہوئیں متاثرہ ٹھیکیدار کا عدالت عالیہ پشاور سے رجوع کرنے کا فیصلہ ،منگل کے روز میڈیا کے نمائندوں سے خصوصی گفتگو میں گورنمنٹ کنٹرکٹر طارق خٹک نے انکشاف کیا کہ ٹی ایم اے بانڈہ داؤد شاہ کے زیر اہتمام 26 اگست کو ہونیوالے تحصیل کونسل کے سالانہ ترقیاتی فنڈ کے تقریباًآٹھ کروڑ روپے کے 21 اور 29 اگست کو ہونیوالے پروڈکشن بونس فنڈ کے تقریباًچھ کروڑ روپے کے چھ ٹینڈر 20 سے25 فیصد کمیشن کے عوض بغیر اوپننگ کے کرک میں کمیشن متعارف کرانے والے بڑے ٹھیکیداروں میں بانٹ دئیے گئے انہوں نے کہا کہ ہم جو لائسنس کی مدمیں سالانہ پانچ لاکھ روپے کا ٹیکس قومی خزانے کو جمع کرتے ہیں اور ہر ٹینڈرکیلئے فارم حاصل کرکے حیثیت کے مطابق بیلو ریٹ پر حاصل کرنے کے خواہاں اور ٹینڈر میں شامل تھے کو تحصیل ناظم ،ٹی ایم او کی ملی بھگت سے نظر انداز کیاگیا انہوں نے کہا کہ میرے ساتھ مدمقابل کئی گورنمنٹ کنٹرکٹروں نے اس موقع پر احتجاج ریکارڈ کیا جن میں سے بیشتر کے منہ بعد میں غیر قانونی رنگ کے ذریعے بند کئے گئے جس پر میں نے دو ستمبر کو اس سلسلے میں چیف انجینئر اور سیکرٹری بلدیات کو شکایتی درخواستیں بھی دیں مگر وہ بھی تین ہفتے بعد ٹس سے مس نہیں ہوئے انہوں نے اس امر پر انتہائی افسوس کا اظہار کیا کہ ایک طرف تو انصاف اور ترازو کی مخلوط صوبائی حکومت شفافیت کے بلند ،بانگ دعوے کررہی ہے اور تحقیقاتی ادارے نیب ،احتساب کمیشن اور انٹی کرپشن والے صوبے میں کرپشن کے خاتمے کے بلند ،بانگ دعوے کررہے ہیں جبکہ یہا ں ایک ٹی ایم اے میں ہونیوالی کروڑوں روپے کی کرپشن پرسب نے کبوتر کی طرح آنکھیں بند کی ہوئی ہیں انہوں نے چیف انجینئر ،سیکرٹری بلدیات سے مایوس ہونے کے بعد انصاف کیلئے پشاور ہائیکورٹ سے رجوع کرنے کا اعلان کیا ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -