قائمہ کمیٹی برائے قواعد و ضوابط و طریقہ کار استحقاقات کا اجلاس

قائمہ کمیٹی برائے قواعد و ضوابط و طریقہ کار استحقاقات کا اجلاس

  

پشاور( پاکستان نیوز)خیبر پختونخوا اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے قواعد و ضوابط و طریقہ کار استحقاقات اور سرکاری یقین دہانیوں پر عملدرآمد سے متعلق ایک اجلاس کمیٹی کی چیئر پرسن و ڈپٹی سپیکر مہرتاج روغانی کی زیر صدارت منگل کے روزاسمبلی سیکرٹریٹ پشاور کے کانفرنس روم میں منعقد ہوا۔ اجلاس میں کمیٹی کے ممبران و اراکین اسمبلی افتخار علی مشوانی،یاسین خان خلیل،محترمہ معراج ہمایون،نجمہ شاہین کے علاوہ وزیر اعلیٰ کے معاون خصوصی برائے ہاؤسنگ ڈاکٹر امجد علی،ایم پی اے وجیہہ الزمان اور ملک ریاض بطور محرک شامل تھےْ جبکہ محکمہ ہائے قانون،داخلہ و قبائلی امور،خزانہ ،سی اینڈڈبلیو،آبنوشی کے حکام سمیت دیگر متعلقہ حکام نے بھی اجلاس میں شرکت کی۔ اجلاس کی کارروائی میں ایم پی اے وجیہہ الزمان کی نیشنل ہائی ویزاتھارٹی سے متعلق تحریک استحقاق پر این ایچ اے کے حکام نے کمیٹی کے رو برو متعلقہ ایم پی اے سے معذرت کی جس پر محرک نے اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے اپنی تحریک استحقاق واپس لے لی۔ایم پی اے یاسین خلیل کی تحریک استحقاق اسلامیہ کالج یونیورسٹی میں بھرتیوں سے متعلق تھی جس پر کمیٹی نے اسلامیہ کالج یونیورسٹی کے حکام کو مکمل ریکارڈ 15دن کے اندر پیش کرنے کی ہدایت کی جبکہ یاسین خلیل کی خیبر میڈیکل کالج میں بھرتیوں سے متعلق تحریک استحقاق پر کارروائی آئندہ اجلاس تک موخر کر دی گئی۔ایم پی اے نور سلیم ملک کی محکمہ کھیل سے متعلق تحریک استحقاق پر محکمہ کھیل نے کمیٹی کو تفصیلی رپورٹ پیش کی جس پر محرک نے اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے تحریک استحقاق واپس لے لی۔پارلیمانی سیکرٹری برائے محکمہ ماحولیات ایم پی اے فضل الٰہی کی عدم موجودگی کے باعث ان کی تحریک استحقاق پر کارروائی آئندہ اجلاس تک موخر کر دی گئی۔ملک ریاض ایم پی اے کی ایس ایچ او بنوں سے متعلق تحریک استحقاق پر محکمہ پولیس اور محکمہ داخلہ کمیٹی کو مطمئن نہ کر سکی جس پر قائمہ کمیٹی نے ایم پی اے محترمہ معراج ہمایوں کی سربراہی میں دو اراکین اسمبلی افتخار مشوانی اور یاسین خلیل کے علاوہ محکمہ قانون اور محکمہ داخلہ کے نمائندگان پر مشتمل کمیٹی کے قیام کی منظوری دیتے ہوئے واقعے کی تین ہفتوں کے اندر مکمل تحقیقات کر کے رپورٹ کمیٹی کو پیش کرنے کی بھی ہدایت کی۔ایم پی اے ڈاکٹر امجد علی کی محکمہ سی اینڈڈبلیو اور محکمہ آبنوشی سے متعلق تحریک استحقاق پر کمیٹی نے فیصلہ کیاکہ یہ معاملہ انتہائی سنگین نوعیت کا ہے لہذا اسے احتساب کمیشن کے حوالے کیاجائے تاکہ اس ضمن میں مکمل تحقیقات کی جا سکیں۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -