حافظ آباد ، نجی کمپنی کے ملازمین کا سینٹری ورکروں کو حبس بے جا میں رکھ کر تشدد

حافظ آباد ، نجی کمپنی کے ملازمین کا سینٹری ورکروں کو حبس بے جا میں رکھ کر تشدد

حافظ آباد(ڈسٹرکٹ رپورٹر)میونسپل کمیٹی کے خاکروبوں نے آسان اقساط پر سامان فراہم کرنیوالی ایک نجی کمپنی کے ملازمین کی جانب سے 2سینٹری ورکرز کو مبینہ طور پر حبس بیجا میں رکھ کر تشدد کئے جانے کے خلاف فوارہ چوک میں احتجاجی مظاہرہ کیا۔جس کی قیادت سی۔بی۔اے یونین کے چےئرمین اسحاق مسیح نے کی۔ اس موقع پر مظاہرین نے سود خوری بند کرو کے نعرے لگاتے ہوئے الزام عائد کیا کہ مدھریانوالہ چوک میں واقع ایک نجی کمپنی کے 8ملازمین لقمان، کاشف محمود اور یاسر وغیرہ نے قسط بروقت ادا نہ کرنے پر انکے دو سینٹری ورکرز سیموئیل مسیح اور سلیمان یونس کو کام کرتے ہوئے اٹھا کر اپنے آفس لے گئے جہاں دونوں ورکرز کو اڑھائی گھنٹے تک حبس بیجا میں رکھ کر زدوکوب بھی کیا گیا۔ جس کے خلاف انہوں نے مقدمہ کے اندراج کے لئے تھانہ سٹی میں درخواست دے دی ہے۔ اگر نجی کمپنی کے ان آٹھ ملزمان کے خلاف مقدمہ درج نہ کیا گیا تو وہ شہر بھر میں صفائی ستھرائی کا کام چھوڑتے ہوئے غیرمعینہ مدت تک ہرتا ل کردیں گے۔ دوسری جانب نجی کمپنی کے لقمان ولد محمد صادق نے ان تمام الزامات کی تردید کرتے ہوئے پولیس کوتحریری درخواست دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس نے الیکٹرونکس اور دیگر سامان کی دوکان بنارکھی ہے۔ مرادیاں کے رہائشی سیموئیل مسیح نے اس سے فرنیچر وغیرہ اقساط پر حاصل کیا ۔ لیکن وہ اقساط ادا نہ کررہا تھا ۔ اس ضمن میں پولیس تھانہ سٹی کا کہنا ہے کہ یہ فریقین میں لین دین کا تنازعہ ہے جس پر انہوں نے تفتیش شروع کردی ہے۔ اور قانون کے مطابق کاروائی ہوگی۔

مزید : علاقائی