انتقامی سیاست پر یقین نہیں رکھتے ، نواز شریف کی سزا معطلی کے عدالتی فیصلے کا احترام کرتے ہیں : عمران خان

انتقامی سیاست پر یقین نہیں رکھتے ، نواز شریف کی سزا معطلی کے عدالتی فیصلے کا ...

اسلام آباد( آن لائن،صباح نیوز ) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ انتقام کی سیاست پریقین نہیں رکھتے، عدالتیں خودمختار ہیں،نواز شریف کی سزا معطلی کے فیصلے کا احترام کرتے ہیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے گزشتہ روز بنی گالا میں پارٹی کے مشاورتی اجلاس کی صدارت کی ہے، اجلاس میں نوازشریف کی رہائی، منی بجٹ پرعوامی ردعمل اور دورہ سعودی عرب سے متعلق امور پرتبادلہ خیال کیا گیا۔ مشاورتی اجلاس میں شاہ محمود قریشی،، شیریں مزاری ،اسد عمر، نعیم الحق اور ڈاکٹربابراعوان بھی اجلاس میں شریک ہوئے۔ اجلاس میں وزیراعظم کے دورہ سعودی عرب اوردیگر اہم امورپرمشاورت کی گئی۔وزیرخزانہ نے معاشی صورتحال پربریفنگ دی۔اجلاس میں منی بجٹ کے حوالے سے عوامی ردعمل پربھی تبادلہ خیال کیا گیا جبکہ دورہ سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کا بھی جائزہ لیا گیا،بابر اعوان نے وزیراعظم کو شریف خاندان کی رہائی سے متعلق معاملات پر بریفنگ دی اور عدالتی فیصلے کے قانونی نکات پر روشنی ڈالی۔ عدالتی فیصلے کے بعد پیدا ہونے والی سیاسی صورتحال اور نیب کی جانب سے سزا معطلی کے فیصلے کو چیلنج کرنے کے بیان پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔شرکا نے نواز شریف کی سزا کی معطلی سے متعلق تحریک انصاف کے بیانیہ اور آئندہ کی حکمت عملی پر بات چیت کی۔اجلاس میں عمران خان کے دورہ سعودی عرب پراطمینان کا اظہار کیا گیا جبکہ وزیراعظمعمران خان نے کہا کہ سعودی عرب کا دورہ کامیاب رہا۔ وزیراعظم نے کہا کہ کمزور معیشت کی بحالی حکومت کی اولین ترجیح ہے۔حکومت کے پہلے 100بعد واضح عوامی تبدیلی نظر آئے گی۔انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف کے منشور پرتیزی سے عملدرآمد یقینی بنایا جائے گا۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ادارے آزاد ہوں گے توبااثر افراد کیخلاف بھی کاروائی ہوسکے گی۔انہوں نے کرپشن اس ملک کاسب سے بڑا مسئلہ ہے تاہمہمیں عام آدمی کی زندگی کوبہترکرنے کیلئے اقدامات کرنا ہوں گے۔

عمران خان/مشاورتی اجلاس

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان مسلم دنیا میں تنازعات ختم کرنے اور مفاہمت میں کردار ادا کرنا چاہے گا جبکہ یمن کا تنازع ختم کرانے کے لیے مثبت کردار ادا کرنے کو تیار ہیں۔وزیراعظم عمران خان کا العربیہ ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے کہنا تھا کہ سعودی عرب نے ضرورت پڑنے پر ہمیشہ پاکستان کی مدد کی اور پاکستان میں جو بھی برسراقتدار آئے گا سب سے پہلے سعودی عرب کا دورہ کرے گا۔انہوں نے کہاکہ مسلم دنیا میں کوئی تنازع نہیں ہونا چاہیے کیونکہ مسلم دنیا میں تنازعات پہلے ہی ہم سب کو کمزور کر رہے ہیں، پاکستان مسلم دنیا میں تنازعات ختم کرنے اور مفاہمت میں کردار ادا کرنا چاہے گا، یمن کا تنازع ختم کرانے کے لیے مثبت کردار ادا کرنے کو تیار ہیں، مشرق وسطیٰ میں مفاہمت کا کردار ادا کرنا چاہتے ہیں جبکہ حوثی باغیوں کے حملوں کے مقابلے میں سعودی عرب کا ساتھ دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ افغانستان اور دیگر ملکوں کے تنازعات سے پاکستان پہلے ہی بہت متاثر ہوا ہے۔وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستان کے عوام سعودی عرب کا بہت احترام کرتے ہیں، پاکستان ہمیشہ سعودی عرب کے ساتھ کھڑا ہے اور اس کی حمایت جاری رکھے گا۔سعودی خبر ایجنسی کو انٹرویو میں کہا ، ہمیشہ سعودی عرب کے ساتھ کھڑے ہوں گے کیونکہ اْس نے ہر بْرے وقت میں پاکستان کا ساتھ دیا۔ افغانستان اور بھارت سے باہمی اعتماد پر مبنی اچھے تعلقات چاہتے ہیں۔

وزیراعظم/ انٹرویو

مزید : کراچی صفحہ اول