سٹیل کی مقامی صنعت کو فروغ  دینے کی ضرورت ہے، قیصر خان 

سٹیل کی مقامی صنعت کو فروغ  دینے کی ضرورت ہے، قیصر خان 

  

اسلام آباد  (اے پی پی) ایف پی سی سی آئی کے نائب صدر قیصر خان داؤدزئی نے  سٹیل کی غیر ملکی صنعت کے بجائے مقامی صنعت کو فروغ  دینے کی ضرورت پرزوردیتے ہوئے کہاہے کہ  فولاد کی درامد پرعائد محاصل میں کمی سے مشکلات کا شکار مقامی صنعت مزید خطرات سے دوچار ہو جائے گی۔غیر ملکی صنعت کے بجائے مقامی صنعت کوٹیکس چھوٹ دی جائے تاکہ یہ ترقی کرے اورسٹیل کی مصنوعات کی قیمت کم ہونے سے تعمیرات وغیرہ سستی ہو جائیں گی۔  بڑے سٹیل پروڈیوسرز کے   وفد سے بات چیت کرتے ہوئے  انہوں نے کہا ہے پاکستان میں سٹیل کا فی کس استعمال 43 کلو گرام ہے جو بہت کم اور ترقی کے راستے میں رکاوٹ ہے۔ اس کے مقابلہ میں بھارت میں سٹیل کا استعمال 62 کلو گرام، جنوبی کوریا میں 1123کلو گرام جبکہ عالمی اوسط 214 کلو گرام ہے۔ حکومت اس اہم صنعت کی ترقی کے لئے مراعات کا اعلان کرے تاکہ روزگار محاصل اور فولاد کے استعمال میں اضافہ ہو۔انھوں نے کہا کہ فولاد برامد کرنے والے ممالک ٹاپ ٹین ممالک میں کاروباری لاگت پاکستان سے بہت کم ہے جبکہ پاکستان میں اس صنعت کے لئے مسائل کا ابنار لگا ہوا ہے اس لئے ان ممالک  سے مسابقت مشکل ہے۔فولاد کی درامد پر محاصل کم کرنے سے جہاں مقامی صنعت کی بقاء کو خطرات لاحق ہو جائیں گے وہیں اس شعبہ میں کی گئی اربوں روپے کی سرمایہ کاری ضائع ہو جائے گی جبکہ مستقبل میں سرمایہ کاری کے امکانات محدود اور ہزاروں نوکریاں ختم ہو جائیں گی۔انہوں نے کہاکہ  سٹیل درامد پر ایک ارب ڈالر کا اضافی خرچہ آئے گا جس سے زرمبادلہ کے ذخائر پر دباؤ بڑھے گا۔غیر ملکی کمپنیوں سے مقابلہ سے قبل مقامی انڈسٹری کے لئے ڈھانچہ جاتی اصلاحات، مسابقت کی بہترفضا، ٹیرف کے معاملات حل اور کاروباری لاگت، توانائی کی قیمت اور ٹیکس کم کئے جائیں۔ 

مزید :

کامرس -