کینولا کی کاشت کا موزوں ترین وقت یکم اکتوبر سے ہے،ماہرین

  کینولا کی کاشت کا موزوں ترین وقت یکم اکتوبر سے ہے،ماہرین

  

فیصل آباد (اے پی پی) زرعی ماہرین نے کہا کہ وسطی و جنوبی پنجاب میں کینولا کی کاشت کا موزوں ترین وقت یکم اکتوبر سے ہے جبکہ صوبے کے دیگر علاقوں میں کینولا کی کاشت رواں ہفتہ سے شروع کر کے 31 اکتوبر تک مکمل کی جا سکتی ہے۔ انہوں نے بتایاکہ کینولا کی اچھی پیداوار حاصل کرنے کیلئے ڈیڑھ سے دو کلو گرام صاف ستھرا معیاری، صحت مند اور منظور شدہ بیج فی ایکڑ استعمال کیاجاسکتا ہے۔ انہوں نے کہاکہ کینولا کی کاشت کیلئے زمین میں وتر کم ہونے کی صورت میں بیج کی مقدار بڑھائی جاسکتی ہے۔ انہوں نے کہاکہ کینولا کی فصل کو بیماریوں سے محفوظ کرنے کیلئے بیج کو سرایت پذیر زہر لگانا بھی ضروری ہے۔انہوں نے کہاکہ کاشتکار زرعی ماہرین یا محکمہ زراعت کے فیلڈسٹاف کی مشاورت سے بیج کو کاشت سے قبل سفارش کردہ پھپھوندی کش زہر ضرور لگائیں۔

۔ انہوں نے کہاکہ کینولا کی کاشت ڈرل کے ذریعے ایک سے ڈیڑھ فٹ یا 30 سے45 سینٹی میٹر کے فاصلہ پر قطاروں کی صورت میں کی جائے اور اس بات کاخاص خیال رکھا جائے کہ بیج کی گہرائی ایک انچ سے ڈیڑھ انچ یا دو سے چار سینٹی میٹر سے زیادہ نہ ہو۔ انہوں نے کہاکہ کینولا کی کاشت وتر حالت میں کی جائے اور اگر کاشت کے وقت وتر کم ہو تو کاشت سے پہلے بیج کو  نمدار مٹی میں ملا کر 6گھنٹے تک پڑ ارہنے دیاجائے اور پھر اس کی کاشت کی جائے۔ انہوں نے کہاکہ اگر ناگزیر حالات ہوں تو خشک زمین میں کینولا کی کاشت کے بعد اسے پانی بھی دیاجاسکتاہے۔انہوں نے کہاکہ کاشتکار مزید رہنمائی کیلئے ماہرین زراعت کی خدمات سے استفادہ کر سکتے ہیں۔

مزید :

کامرس -