تحریک لبیک کے زیر اہتمام تحفظ ناموس رسالتؐ و صحابہؓ مارچ 

    تحریک لبیک کے زیر اہتمام تحفظ ناموس رسالتؐ و صحابہؓ مارچ 

  

لاہور(نمائندہ خصوصی)عزیز بھٹی ٹاؤن  کے ائمہ و خطباء اورتحریک لبیک یا رسول اللہ صلی اللہ علیک وسلم کے زیرا ہتمام سویڈن و ناروے میں قرآن پاک کی بے حرمتی،فرانس میں گستاخانہ خاکوں کی مذمت کیلئے اورپاکستان میں امہات المومنین اورصحابہ کرام ؓ کی مبینہ گستاخی کرنے والوں کی عدم گرفتاری کی مذمت اورڈاکٹر محمد اشرف آصف جلالی کی رہائی کیلئے السعودسنٹر سے لیکر مغلپورہ لاہور تک ”تحفظ ناموس رسالت ؐوتحفظ ناموس صحابہ و اہلبیت رضی اللہ تعالہ عنھم مارچ“ کا انعقاد کیا گیا۔ مارچ کے تمام انتظامات محترم محمد بلال صاحب نے کیے۔مارچ سے علماء کرام نے اظہار خیال کیا۔

 مارچ سے خطاب کرتے ہوئے تحریک لبیک یا رسول اللہ صلی اللہ علیک وسلم کے قائم مقام امیر حضرت علامہ قاری فرمان علی حیدری نے کہا:اوچھے ہتھکنڈوں سے قرآن کے نورِ ہدایت کو روکا نہیں جاسکتا۔اندھیروں کے متوالے قرآن کے سویروں کا مقابلہ نہیں کر سکتے۔ قرآن انسان کو دبانے نہیں بلکہ انسان کے مقدر جگانے والا ہے۔اس حقیقت کا انکار نہیں کیا جا سکتا، کہ 14 صدیوں میں جس کتاب نے انسانی کردار کو چار چاند لگائے ہیں وہ قرآن مجید ہی ہے۔ قرآن مجید کی بے حرمتی پر مسلم حکمرانوں کی خاموشی کی جتنی مذمت کی جائے تھوڑی ہے۔آج جو ہاتھ قرآن کی عظمت و حرمت کیلئے نہیں اٹھ پائے گا کل ذلت و رسوائی اس کا مقدر بن جائے گی۔مغرب کی طرف سے گستاخانہ خاکوں کی نمائش کے اعلان کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں۔ ناموس رسالت اپنے تحفظ میں ہماری محتاج نہیں ہم اپنی نجات میں اس کے محتاج ہیں۔ناموس مصطفی ﷺ پر نت نئے حملے گستاخوں کو قانونی شکنجے میں جکڑنے ہی سے روک سکتے ہیں۔اس قوم کا بچہ بچہ ذات رسولﷺ کو اپنی جان سے زیادہ عزیز سمجھتا ہے۔ مسلم ممالک کے حکمران اقوام متحدہ میں ان گستاخیوں کے معاملے کو اٹھاتے ہوئے عالمی سطح پر قانون ناموس رسالت کومنظور کروائیں۔ ہمارا حکومت پاکستان سے مطالبہ ہے جب تک ان گستاخوں کو قرار واقعی سزا نہیں مل جاتی اس وقت تک سویڈن،ناروے اور فرانس سے سفارتی تعلق ختم کیا جائے۔ اسمبلیوں میں بیٹھے ارکان یہ سمجھ لیں کہ ساری عزتیں رسول اللہ ﷺ کے ساتھ وفاداری کے ساتھ وابستہ ہیں۔انبیاء کرام،صحابہ کرام، اہل بیت اطہار، اُمہات المؤمنین رضی اللہ تعالیٰ عنہم اجمعین، اولیائے کرام اور دوسری مقدس شخصیات کی گستاخیوں پر مبنی بلاگس اورلنکس کو ختم کیا جائے اور آئندہ ایسے نفرت آمیز، اشتعال انگیز اور گستاخانہ لٹریچر کی اشاعت کو سخت ترین جرم قرار دیا جائے۔ ڈاکٹر محمد اشرف آصف جلالی کو پابند سلاسل رکھنا اور مبینہ گستاخی کرنے والوں کا سرعام دندناتے پھرناقانون نافذ کرنے والے اداروں کیلئے  لمحہ فکریہ ہے۔ حکومت ڈاکٹر محمد اشرف آصف جلالی کو جلد از جلد باعزت رہا کرے۔ صاحبزادہ مرتضی علی ہاشمی نے کہا: آج کی بے سہارا انسانیت کو صرف اور صرف دامن قرآن میں ہی پناہ مل سکتی ہے۔ ایک سوچی سمجھی سازش کے تحت آئے روز مغرب کی طرف سے گستاخانہ جسارتیں کی جارہی ہیں۔قیام امن کے لیے فرقہ وارانہ منافرت کا خاتمہ ضروری ہے۔حکومت مقدّس شخصیات کے بارے میں نفرتیں پھیلانے والوں کے خلاف سخت کاروائی کرے۔علامہ عبد الغفور چشتی نے کہا: قرآن اللہ تعالیٰ اوراللہ والوں سے محبت اور اللہ تعالیٰ اور اللہ والوں کے دشمنوں سے نفرت کا حکم دیتا ہے۔ سینوں میں قرآن بسانے والے، قرآن جلانے کی جارحیت ہر گز برداشت نہیں کر سکتے۔ معاشرے میں عدم برداشت کا بڑھتا ہوا رجحان انتہائی خطرناک ہے۔گستاخانہ لٹریچر فرقہ واریت کے پھیلاؤ کا سب سے بڑا سبب ہے۔ علامہ محمدعبدالطیف جلالی نے کہا:حکومتی سرپرستی میں یورپ میں کی جانے والی گستاخانہ کاروائیاں تہذیبوں کے تصادم کا پیش خیمہ ہو سکتی ہیں۔ قرآن جلانے کی یہ جسارت امن عالم کو تباہ کر سکتی ہے۔علامہ محمدحسنین جلالی نے کہا: امت مسلمہ کے لیے حرمت ِقرآن کے مقابلہ میں مغربی دنیا سے وابستہ مفادات کی کوئی حیثیت نہیں ہے۔ آئندہ کا لائحہ عمل پیش کرتے ہوئے مولانا فرمان علی حیدری نے کہا تحریک لبیک یا رسول اللہ صلی اللہ علیک وسلم کے زیر اہتمام انشا ء اللہ تعالی26ستمبر بروز ہفتہ کومرکز صراط مستقیم تاجباغ لاہور میں ”لبیک اسلام کانفرنس“کا انعقادکیا جائے گا۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -