جمرود شاہ کس میں انضمام کے خلاف گرینڈ مشاورتی جرگہ کا انعقاد

جمرود شاہ کس میں انضمام کے خلاف گرینڈ مشاورتی جرگہ کا انعقاد

  

خیبر (بیورورپورٹ)خیبر قومی جرگہ کے زیر اہتمام جمرود شاہ کس میں انضمام کے خلاف گرینڈ مشاورتی جرگہ منعقد ہوا جر گے میں سینٹر الحاج تاج محمد آفریدی نے بھی شرکت کی جر گے میں تینوں تحصیلوں کے مشران کے علاوہ کثیر تعداد میں لوگوں نے شرکت کی جرگے سے خطاب کر تے ہوئے قومی جرگہ کے چیئرمین ملک بسم اللہ آفریدی،،ملک تہماش شلمانی،ملک محمد حسین،افراسیاب آفریدی،جے یوآئی کے رہنماء سید کبیر آفریدی،ملک پرویز،داودخان اور دیگر کہا کہ انضما غیر آئینی،اورغیر جمہوری کیا گیا ہے انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ آف پاکستان میں انضمام کے خلاف کیس سماعت کیلئے منظور ہو چکی ہے اور 23ستمبر کو کیس کی سماعت ہو رہی ہے اس لئے 22ستمبر کو اسلام آباد پریس کلب کے سامنے احتجاج بھی کرینگے اور اسی دن پریس کانفرنس بھی کرینگے مشران نے کہا کہ انضمام مخالف تحریکوں کوا کھٹاکرکے ایک تنظیم تشکیل دینگے کیونکہ انکا کوئی سیا سی مقصد نہیں ہے صرف وہ انضمام کے خلاف ہیں کیونکہ انضمام سے قبائلی عوام کی شناخت ختم ہو گئی ہے ملک بسم اللہ آفرید ی نے کہا کہ انضمام کو غیر آئینی اس لئے کہتے ہیں کہ آئین میں واضح طور پر 239-4کے تحت صوبے بنانے کیلئے حدود کا طریقہ کار وضع کیا گیا ہے جبکہ قبائلی کا نمائندہ جرگہ صدر مشاورت کے بعد فیصلہ کرینگے جبکہ انضمام کرکے 239-4کو ختم کر دیا گیا ہے انہوں نے کہا کہ سرتاج عزیز کمیٹی نے جو سفارشات پیش کئے تھے اس میں فاٹاکونسل،اصلاحات یا علیحدہ صوبہ تھا اس میں انضمام نہیں تھا انہوں نے کہا کہ اب سارے قبائلی عوام چیخ رہے ہیں کہ انکے ساتھ ظلم کیا گیا ہے انضما م جلد بازی میں کیا گیا ہے اور جو وعدے انضمام سے پہلے کئے گئے تھے ایک بھی پورا نہیں کیا گیا انہوں نے کہا کہ قبائلی عوام الگ کونسل یا الگ صوبہ چاہتے ہیں کیونکہ انضمام سے قبائلی عوام کا روزگار ختم ہو گیا اور اراضی تنازعات میں اضافہ ہو گیا ہے انہوں نے کہا کہ قبائلی علاقے کھنڈرات کا منظر پیس کر رہے ہیں جبکہ حکومت تھانے بنانے میں مصروف ہیں قبائلی عوام جو چاہتے ہیں وہ نہیں کرتے بلکہ جس سے قبائلی عوام نفرت کرتے ہیں حکومت وہ مسلط کر تے ہیں مشران نے کہا کہ 23ستمبر کے بعد آئندہ کا لائحہ عمل تیار کر ینگے 

مزید :

پشاورصفحہ آخر -