وقتِ رخصت کہیں تارے کہیں جگنو آئے | بشیر بدر |

وقتِ رخصت کہیں تارے کہیں جگنو آئے | بشیر بدر |
وقتِ رخصت کہیں تارے کہیں جگنو آئے | بشیر بدر |

  

وقتِ رخصت کہیں تارے کہیں جگنو آئے

ہار پہنانے مجھے پھول سے بازو آئے

بس گئی ہے  مرے احساس میں یہ کیسی مہک

کوئی خوشبو میں لگاؤں تری خوشبو آئے

میں نے دن رات خدا سے یہ دعا مانگی تھی

کوئی آہٹ نہ ہو مرے در پہ اور تو آئے

اُس کی باتیں کہ گل و لالہ پر شبنم برسے

سب کو اپنانے کا اس شوخ کو جادو آئے

اِن دنوں آپ کا عالم بھی عجب عالم ہے

شوخ کھایا ہوا جیسے کوئی آہو آئے

اُس نے چھو کر مجھے پتھر سے انسان کیا

مدتوں بعد مری آنکھ میں آنسو آئے 

 شاعر: بشیر بدر

( شعری مجموعہ: آس ،سالِ اشاعت،1993)

Waqt-e- Rukhsat    Kahen    Taaraty    Kahen     Jugnoo    Aaey

Haar     Pehnaanay     Mujhay    Phool    Say    Baazoo    Aaey

Bass    Gai    Hay    Miray    Ehsaas    Men    Yeh    Kaisi    Mahak

Koi    Khusboo    Main    Lagaaun    Tiri     Khushboo    Aaey

Main    Nay    Din    Raat    Khuda    Say   Yeh    Dua    Maangi   Thi

Koi    Aahat    Na    Ho   Dar    Pe    Miray   Aor    Too    Aaey

Uss    Ki     Baaten    Keh   Gul-o- Laala   Pe    Shabnam   Barsay

Sab    Ko     Apnaanay    Ka    Uss    Shokh    Ko    Jaadoo   Aaey

In    Dino    Aap    Ka     Aalam    Bhi   Ajab     Aalam   Hay

Shokh     Khaaya    Hua     Jaisay    Koi     Aahoo    Aaey

Uss    Nay    Chhoo     Kar    Mujhay    Pathar    Say    Phir    Insaan    Kia

Mudaton    Baad    Miri     Aankhon    Men     Aansoo    Aaey

Poet: Bashir Badr

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -