وہ نہیں ہے تو اُس کی آس رہے | بشیر بدر |

وہ نہیں ہے تو اُس کی آس رہے | بشیر بدر |
وہ نہیں ہے تو اُس کی آس رہے | بشیر بدر |

  

وہ نہیں ہے تو اُس کی آس رہے

ایک جائے تو ایک پاس رہے

جب بھی کسنے لگا اُتا ر دیا

اس بدن پر کئی لباس رہے

ایک دن میں اگر لہو پی لوں

کئی دن برتنوں میں باس رہے

دونوں اک دوسرے کا منہ دیکھیں

آئینہ، آئینے کے پاس رہے

آج ہم سب کے ساتھ خوب ہنسے

اور پھر دیر تک اداس رہے

شاعر: بشیر بدر

( شعری مجموعہ: آس ،سالِ اشاعت،1993)

Wo    Nahen    Hay    To    Uss    Ki    Aas   Rahay

Aik    Jaaey    To    Aik    Paas   Rahay

Jab    Bhi    Kasnay    Laga     Utaar   Dia

Iss    Badan    Par    Kai    Libaas    Rahay

Aik    Din    Main    Agar    Lahu    Pi   Lun

Kai    Din     Bartanon    Men    Baas    Rahay

Donon     Ik     Doosray    Ka    Munh    Dekhen

Aaina  ,   Aainay    K    Paas   Rahay

Aaaj    Ham   Sab    K    Saath    Khoob    Hansay

Aor    Phir    Der    Tak    Udaas    Rahay

Poet: Bashir   Badr

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -