منزل نگاہِ شوق کو اب تک ملی نہیں | بہزاد لکھنوی |

منزل نگاہِ شوق کو اب تک ملی نہیں | بہزاد لکھنوی |
منزل نگاہِ شوق کو اب تک ملی نہیں | بہزاد لکھنوی |

  

منزل نگاہِ شوق کو اب تک ملی نہیں

جس دن سے چلی ہے یہ کشتی تھمی نہیں

سجدے بھی کر چکا ہوں دعائیں بھی کر چکا

لیکن جنونِ عشق میں کوئی کمی نہیں

میں ہوں گناہ گار محبت کا کیا قصور

میں نے نظر اُٹھائی نظر خود اُٹھی نہیں

تیرے قدم پہ ہے جو مرا سر جھکا ہوا

ساقی یہ عین ہوش ہے یہ بے خودی نہیں

مجھ کو خوشی نہ دے مجھے غم دے نگاہِ لطف

کیا اس کا اعتبار ابھی ہے ابھی نہیں

مجھ بادیہ نشیں کو نہ پوچھا یہ کیا کیا

اے جانِ انجمن تری محفل جمی نہیں

بہزاد تلخیوں کو نہیں دیکھتے ہیں وہ

رونا ہے زندگی کا یہ میری ہنسی نہیں

شاعر: بہزاد لکھنوی

(شعری مجموعہ: وجد و حال ، سالِ اشاعت،1955 )

Manzill    Nigaah-e- Shaoq    Ko    Ab   Tak    Mili   Nahen

Jiss    Din    Say    Chali    Hay   Yeh    Kashti    Thami   Nahen

Sajday    Bhi    Kar    Chuka    Hun    Duaaen    Bhi    Kar   Chuka

Lekin     Junoon -e- Eshq    Men    Koi     Kami    Nahen

Main    Hun    Gunehgaar    Muhabbat    Ka     Kaya    Qasoor

Main    Nay    Nazar    Uthaai    Nazar    Khud    Uthi    Nahen

Teray    Qadam    Pe    Hay   Jo    Mira    Sar    Jhuka    Hua

Saaqi    Yehj    Ain    Hosh     Hay   Yeh    Bekhudi   Nahen

Mujhay    Khushi    Na    Day    Mujhay    Gham    Day   Nigaah-e- Lutf

Kaya    Iss    Ka    Aitbaar    Abhi    Hay    Abhi   Nahen

Mujh    Baadiya     Nasheen    Ko    Na    Poocha   Yeh     Kaya    Kiya

Ay    Jaan -e- Anjuman    Tiri    Mehfill     Jami    Nahen

BEHZAD    Talkhiyon     Ko    Nahen    Dekhtay    Hen  Wo

Rona    Hay    Zindagi    Ka    Yeh    Meri    Hansi    Mahen

Poet: Behzad   Lakhnavi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -