نرگسِ بیمار ہے میری طرح | بہزاد لکھنوی |

نرگسِ بیمار ہے میری طرح | بہزاد لکھنوی |
نرگسِ بیمار ہے میری طرح | بہزاد لکھنوی |

  

نرگسِ بیمار ہے میری طرح

حسرتِ دیدار ہے میری طرح

میں تو پی لیتا ہوں ان آنکھوں سے مے

کون بادہ خوار ہے میری طرح

چھا گئی کیا شامِ فرقت ہر طرف

کل جہاں بیدار ہے میری طرح

جانچ لو محفل کا عالم دیکھ کر

کس کو تم سے پیار ہے میری طرح

میرا عالم میری مستی ہے عیاں

کون سجدہ بار ہے میری طرح

آستانِ یار سے مس ہوتے ہی

سر مرا سرشار ہے میری طرح

کیوں ہے اے بہزاد ساقی کی پکار

کیا کوئی مے خوار ہے میری طرح

شاعر:بہزاد لکھنوی

(شعری مجموعہ: وجد و حال ، سالِ اشاعت،1955 )  

Nargis-e- Bemaar     Hay     Meri     Tarah

Hasrat-e- Dedaar     Hay     Meri     Tarah

Main     To    Pi     Leta      Hun     In    Aankhon    Say   May

Kon    BaadaKhaar    Hay     Meri     Tarah

Chhaa    Gai    Kaya     Shaam -e- Furqat     Har    Taraff

Kull    Jahan    Bedaar    Hay     Meri     Tarah

Jaanch    Lo    Mefill     Ka      Aalam    Dekh    Kar 

Kiss     Ko    Tum    Say    Payar     Hay     Meri     Tarah

Mera     Aalam      Meri    Masti     Hay    Ayaan

Kon    Sajda    Baar    Hay     Meri     Tarah

Aaastaan -e- Yaar    Say   Mass     Hotay    Hi

Sar     Mira     Sarshaar    Hay     Meri     Tarah

Kiun    Hay    Ay    BEHZAD     Saaqi    Ki   Pukaar

Kaya    Koi      Maykhaar    Hay     Meri     Tarah

Poet: Behzad     Lakhnavi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -