بے وفا کہنے سے کیا اے بے وفا ہو جائے گا  | بے خود دہلوی |

بے وفا کہنے سے کیا اے بے وفا ہو جائے گا  | بے خود دہلوی |
بے وفا کہنے سے کیا اے بے وفا ہو جائے گا  | بے خود دہلوی |

  

بے وفا کہنے سے کیا اے بے وفا ہو جائے گا 

تیرے ہوتے اس صفت کا دوسرا ہو جائے گا 

شرط کر لو پھر مجھے برباد ہونا بھی قبول 

خاک میں مل کر تو حاصل مدعا ہو جائے گا 

سینہ توڑا دل میں چٹکی لی جگر زخمی کیا 

کیا خبر تھی تیر بھی تیری ادا ہو جائے گا 

آنکھ سے ہے وصل کا اقرار دل دُگدا میں ہے 

تم زباں سے اپنی کہہ دوگے تو کیا ہو جائے گا 

اس نے چھیڑا تھا مجھے تم جان دوگے کب ہمیں 

کہہ دیا میں نے بھی جب وعدہ وفا ہو جائے گا 

یوں سوال وصل پر ٹالا کیا برسوں کوئی 

صبر کر مضطر نہ ہو تیرا کہا ہو جائے گا 

توبہ بھی کر لی تھی یہ بھی نشہ کی تھی اک ترنگ 

آپ سمجھے تھے کہ بیخودؔ پارسا ہو جائے گا 

شاعر: بے خود دہلوی

(شعری مجموعہ: اسرارِ بے خود، سالِ اشاعت،1980 )

Bewafa     Kehnay   Say   Kaya    Ay   Bewafa   Ho    Jaey    Ga

Teray    Hotay    Iss    Sifat    Ka    Doosra   Ho    Jaey    Ga

Shart    Kar    Lo   Phir    Mujhay    Barbaad    Hona    Bhi  Qubool

Khaak    Men   Mill    Kar   To   Haasil    Mudaa   Ho    Jaey    Ga

Seena   Torra , Dil    Men    Chuttki   Li  ,   Jigar    Zakhmi   Kiya

Kaya    Khabar   Thi    Teer   Bhi   Teri    Adaa   Ho    Jaey    Ga

Aankh    Say   Hay   Wasl    Ka   Iqraar    Dil    Dugdaa   Men   Hay

Tum    Zubaan    Say   Apni    Keh    Do    Gay   To   Kaya   Ho    Jaey    Ga

Uss    Nay    Chherra   Tha   Mujhay   Tum   Jaan    Do    Gay   Kab   Hamen

Keh    Diya    Main   Nay   Bhi    Jab   Waada   Wafaa   Ho    Jaey    Ga

Yun    Sawaal -e- Wasl    Par    Taala   Kiya    Barson   Koi

Sabr    Kar    Muztir    Na    Ho   ,   Ter a   Kahaa    Ho    Jaey    Ga

Taoba    Bhi    Kar    Li    Thi   ,   Yeh   Bhi    Nashha   Ki   Thi   Ik  Tarang

Aaap    Samjhay    Thay    Keh    BEKHUD P  aasrssa    Ho    Jaey    Ga

Poet: Bekhud    Dehlvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -