حسن میں جب ناز شامل ہو گیا  | بے خود دہلوی |

حسن میں جب ناز شامل ہو گیا  | بے خود دہلوی |
حسن میں جب ناز شامل ہو گیا  | بے خود دہلوی |

  

حسن میں جب ناز شامل ہو گیا 

ایک پیدا اور قاتل ہو گیا 

سامنے سے اب نہیں ہٹتا کبھی

آئینہ بھی اُس پہ مائل ہو گیا

تھی نگاہِ حسرت آلودہ غضب

میں ترے بسمل سے بسمل ہوگیا

عشق سے پہلے نہ تھامیں بے خبر

آنکھ لگ جانے سے غافل ہوگیا

چاہنے والوں میں اُس کے دھوم ہے

ہم میں یہ بے خود بھی شامل ہو گیا

شاعر: بے خود دہلوی

(شعری مجموعہ: اسرارِ بے خود، سالِ اشاعت،1980 )

Husn     Men    Jab     Naaz     Shaamil    Ho   Gaya

Aik    Paida   Aor   Qaatil   Ho   Gaya 

Saamnay   Say   Ab   Nahen   Hatta   Kabhi

Aaina    Bhi   Uss   Pe   Maail   Ho   Gaya

Thi   Nigaah-e- Hasrat   Aalooda   Ghazab

Main   Tiray   Bismil    Say   Bismil   Ho   Gaya

Eshq   Say   Pehlay   Main   Na   Tha   Bekhabar

Aankh    Lagg   Jaanay   Say   Ghaafil   Ho   Gaya

Chaahnay   Waalon   Men   Uss   K   Dhoom   Hay

Ham    Men   BEKHUD   Bhi   Shaamil    Ho   Gaya

Poet: Bekhud    Dehlvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -