دل کوپہلو میں اضطراب رہا | بے خود دہلوی |

دل کوپہلو میں اضطراب رہا | بے خود دہلوی |
دل کوپہلو میں اضطراب رہا | بے خود دہلوی |

  

دل کوپہلو میں اضطراب رہا

زندگی بھر یہی عذاب رہا

دیکھیے کیا قیامت آتی ہے

اور کچھ دن اگر شباب رہا

رازِ الفت نہ چھپ سکا ہم سے

صبر کے ساتھ اضطراب رہا

دل میں جب تک رہا وہ پردہ نشیں

 مجھ کواپنے سے بھی حجاب رہا

وصل میں وہ کھچے رہے ہم سے

مہربانی میں بھی عتاب رہا

خوب دلکھول کر اُڑا زاہد

میرے ذمے ترا حساب رہا

ہولیے جس کے ہو لیے بے خود

یار اپنا تو یہ حساب رہا

شاعر: بے خود دہلوی

شاعر: بے خود دہلوی

(شعری مجموعہ: اسرارِ بے خود، سالِ اشاعت،1980 )

Dil    Ko    Pehlu    Men    Iztaraab    Raha

Zindagi    Bhar    Yahi     Azaab    Raha

Daikhiay    Kaya    Qayamat    Aati   Hay

Aor    Kuch    Din    Agar    Shabaab   Raha

Raaz -e- Ulfat    Na    chhup    Saka    Ham   Say

Sabr    K   Saath    Iztaraab   Raha

Dil   Men    Jab   Tak    Raha    Wo    Parda   Nasheen

Mujh    Ko    Apnay   Say    Hijaab   Raha

Wasl    Men    Wo   Khichay   Rahay    Ham   Say

Mehrbaani    Men   Bhi    Utaab   Raha

Khoob   Dik   Khol   Kar    Uraa   Zahid

Meray    Zimmay    Tira    Hisaab   Raha

Ho   Liay   Jiss    K    Ho   Liay   BEKHUD

Yaar   Apna   To   Yeh   Hisaab   Raha

Poet: Bekhud   Dehlvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -