امریکی عدالت نے پاکستانی نژاد قیدی عدنان سید کی سزا کالعدم قرار دیدی 

امریکی عدالت نے پاکستانی نژاد قیدی عدنان سید کی سزا کالعدم قرار دیدی 

  

نیویارک (این این آئی)امریکی عدالت نے پوڈکاسٹ سیریل سے شہرت پانے والے پاکستانی نژاد قیدی عدنان سید کی سزا کو کالعدم قرار دیتے ہوئے انکی رہائی کا حکم دیدیا۔عدنان سید 18 سالہ من لی کا گلا گھونٹ کر قتل کرنے کے الزام میں عمر قید کی سزا کاٹ رہے تھے، لی کی لاش بالٹی مور کے ایک پارک میں دبائی گئی تھی۔غیر ملکی میڈیا رپورٹس کے مطابق عدنان سید کو سال 2000 میں من لی کے قتل کے الزام میں قید کی سزا سنائی گئی تھی اور وہ 23 سال سے قید تھے۔عدنان سید کی فیملی فرینڈ رابعہ چوہدری عدنان سید کی رہائی کیلئے کافی سرگرم رہیں، رابعہ خود بھی ایک وکیل ہیں اورانہیں عدنان کی بے گناہی کا یقین تھا۔رابعہ نے اس سلسلے میں امریکی صحافی سارہ کینیگ کو ای میل کی اور ان سے اس قتل کی تحقیقات کا کہا، امریکی صحافی نے اصل حقائق جاننے کیلئے عدنان سید کے اسکول کے دوستوں کے انٹرویوز کیے جو اس وقت تک جوان ہوچکے تھے۔امریکی صحافی کی یہ تحقیقات ہفتہ وار پوڈکاسٹ سیریل کی وجہ بنی جسے 2014 میں پیش کیا گیا تھا اور اسکی پہلی قسط کو 30 ملین بار ڈاون لوڈ کیا گیا۔اس پوڈکاسٹ نے کافی شہرت حاصل کی تھی اور اس نے ایک نئی بحث چھیڑ دی جس کے بعد 2015 میں عدنان سید کے دوبارہ ٹرائل کی راہ ہموار ہوئی، لوگوں کا یہ کہنا تھا کہ عدنان سید کو انکے مذہب کی وجہ سے تعصب کا نشانہ بنایا گیا ہے۔امریکی صحافی کی تحقیقات میں دو مشتبہ افراد کی نشاندہی ہوئی جو اس کیس سے منسلک ہیں تاہم ابھی نہ ان کو گرفتار کیا گیا ہے نہ ہی انکے ٹرائل کا فیصلہ ہوا ہے۔گزشتہ روز سماعت کے دوران سرکٹ کورٹ کی جج میلیسا فن نے حکم دیا کہ41 سالہ عدنان سید کی سزا کو ختم کردیا جائے جنہوں نے دو دہائیوں سے زیادہ عرصہ جیل کی سلاخوں کے پیچھے گزارا ہے

پاکستانی رہا

مزید :

صفحہ آخر -