مفروضے پر نہیں جاسکتے، نیب نواز شریف کا پراپرٹیز سے تعلق ثابت کرے: اسلام آباد ہائی کورٹ

  مفروضے پر نہیں جاسکتے، نیب نواز شریف کا پراپرٹیز سے تعلق ثابت کرے: اسلام ...

  

       اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک،این این آئی)اسلام آباد ہائی کورٹ میں ایون فیلڈ ریفرنس میں سزا کیخلاف مریم نواز کی اپیل پر سماعت کے دوران جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دئیے  ہیں کہ مفروضے پر نہیں جاسکتے، نیب دستاویز  سے نواز شریف کا پراپرٹیز سے تعلق ثابت کرے۔منگل کو ایون فیلڈ ریفرنس میں مریم نواز کی سزا کے خلاف اپیل کی سماعت  جسٹس عامر فاروق اور جسٹس محسن اختر کیانی پر مشتمل بینچ نے کی۔سماعت کے آغاز میں نیب پراسیکیوٹر نے اسلام آباد ہائی کورٹ میں  نواز شریف کو اشتہاری قرار  دینے کا عدالتی فیصلہ  پڑھ کر سنایا۔ جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دئیے کہ نوازشریف کی اپیل میرٹ پر نہیں عدم حاضری پر خارج کی گئی تھی، مریم نواز کی اپیل میرٹ پر سنیں گے، انہوں نے اپنا کیس بنایا ہے کہ عدالتی فیصلے میں کیا قانونی سقم ہیں؟ نیب کو اس کا دفاع کرنا ہے۔جسٹس عامر فاروق نے کہا کہ نیب کہتا ہے کہ نوازشریف نے1993 میں اثاثے خریدے اور چھپائے، پھر شواہد سے ہی ثابت کرنا ہے کہ مریم نواز نے اپنے والد کی معاونت کیسے کی؟ جسٹس محسن اخترکیانی نے کہا کہ ہم وہ ٹریک کلیئر کررہے ہیں جس پر آپ نے آگے جانا ہے۔نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ نواز شریف اور ان کے بچے وہاں پر رہ رہے تھے، اس پر جسٹس عامر فاروق نے کہا کہ عوامی معلومات کی کسی بات پر آپ پر بوجھ شفٹ تو نہیں ہوجاتا، آپ فی الحال پراپرٹی کی ملکیت کو نوازشریف سے لنک کردیں، یہاں تو آدھا پاکستان دوسروں کے گھروں میں رہ رہا ہے، پہلے یہ سمجھائیں کہ 1993 میں نیلسن اور نیسکول کا نواز شریف سے کیا تعلق تھا؟ اس سے زیادہ آسان زبان میں نیب سے سوال نہیں کرسکتے۔ عدالت کے سوالوں پر نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ ہماری آج کیلئے بس ہوگئی ہے۔عدالت نے استفسار کیا کہ نوازشریف نے کیا کہیں بھی کہا تھا کہ یہ جائیداد اْن کی ہے؟ اس پر وکیل مریم نواز نے کہا کہ نواز شریف نے کسی بھی فورم پر نہیں کہا کہ جائیداد ان کی ہے۔عدالت نے نیب پراسیکیوٹر کو ہدایت کی کہ یہ بھی بتائیں کہ کیا اپارٹمنٹس خریدنے کے لیے ادائیگی نوازشریف نے کی؟عدالت نے کیس کی مزید سماعت  29 ستمبر تک ملتوی کردی۔بعد ازاں عدالت سے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے کہا ہے کہ عمران خان دھمکیاں دے کر اداروں پر دباؤ ڈالتے ہیں، وہ ہمیشہ للکار کر اپنا راستہ صاف کرتے ہیں، لوگوں کو کہتے ہیں خوف کا بت توڑدیں، خود کسی کا نام لینے کی جرات نہیں، عمران خان کے پاس دھمکیوں کا کوئی ثبوت ہے تو سامنے لائیں۔ایون فیلڈ ریفرنس کی سماعت کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مریم نواز نے کہا کہ قدرت کا اصول ہے سچ سامنے ضرور آتا ہے، جھوٹ کو مٹ جانا ہوتا ہے، چکوال کے جلسے میں کچھ باتیں بہت واضح تھیں، بہروپئے کی منافقت قوم کے سامنے لانا ضروری ہے، کہتے ہیں کہ خوف کا بت توڑ دیں خود میں ان کا نام لینے کی جرات نہیں ہے۔مریم نواز نے کہا کہ میں جمہوریت کی حامی ہوں،عمران خان کی سیاست کو قوم کے سامنے بے نقاب کرنا ضروری ہے، چیئرمین تحریک انصاف اصل میں اپنی چوریوں کو چھپانا چاہتے ہیں۔

مریم نواز

مزید :

صفحہ اول -