کم عمری کی شادی سے صحت کے مسائل پیدا ہوتے ہیں، روک تھام پر کام کر رہےہیں، علامہ طاہر اشرفی

کم عمری کی شادی سے صحت کے مسائل پیدا ہوتے ہیں، روک تھام پر کام کر رہےہیں، ...
کم عمری کی شادی سے صحت کے مسائل پیدا ہوتے ہیں، روک تھام پر کام کر رہےہیں، علامہ طاہر اشرفی

  

کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن )وزیراعظم کے نمائندہ خصوصی برائے بین المذاہب ہم آہنگی علامہ طاہر اشرفی کا کہنا ہے کہ  کم عمری کی شادی سے ماں اور بچے کی صحت کے مسائل پیدا ہوتے ہیں، اسلامی نظریاتی کونسل کم عمری کی شادی کی روک تھام پر کام کر  رہا ہے۔

نجی ٹی وی "جیو نیوز "کے مطابق کراچی میں کم سنی کی شادی اور صحت کے مسائل سے متعلق قومی مذاکرے سے خطاب کرتے ہوئے علامہ طاہر اشرفی کا کہنا تھا کہ کم سنی کی شادی سے بچے اور ماں کی صحت پر بھی اثر پڑتا ہے، شادی کے حوالے سے اسلام نے بیٹیوں کو بھی حق دیا ہے، اسلام میں بھی عاقل اور بالغ کے لیے شادی کا ذکر کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بہت سے لوگ بضد رہتے ہے کہ خاندان سے باہر شادی نہیں کرنی، رسم و رواج اور روایات سے ہٹ کر بچوں کی شادی کرنی چاہیے،وزیراعظم کے نمائندہ خصوصی کا یہ بھی کہنا تھا کہ والدین پر ذمہ داری ہے کہ بچوں کو شادی کے حوالے آگاہی دیتے رہیں اور میڈیا پر بھی کم عمری کی شادی سے متعلق تقاریب ہونی چاہئیں۔

مزید :

قومی -