چھٹیوں کااعلان ہوتے ہی سمرکیمپ شروع،طلبہ لٹنے لگے

چھٹیوں کااعلان ہوتے ہی سمرکیمپ شروع،طلبہ لٹنے لگے

لاہور(خبرنگار) میٹرک کے امتحانات ختم ہوتے ہی پرائیوٹ کالجز نے یکم مئی سے سمر کیمپ کے نام پر لوٹ مار شروع کر دی ہے، جس میں پری میڈیکل اور پری انجینئرنگ کی کلاسز کے طلبا و طالبات سے جہاں فیسیں وصول کرنے کا سلسلہ شروع کر دیا ہے وہاں طلباء و طالبات سے موسم گرما کی چھٹیوں کی سہولت بھی واپس لی جا رہی ہے اس میں لاہور سمیت پنجاب بھر کے 25ہزار سے زائد ایلیٹ کلاسز کے کالجز سمیت اے کیٹگریزی، بی کیٹگریز اور سی کیٹگریز کے کالجز کی انتظامیہ نے طلباء و طالبات کو شیڈولز سلپس بھی جاری کر دی ہیں جس میں لاہور میں 1500سے زائد جبکہ لاہور کے علاوہ فیصل آباد، گوجرانوالہ، ملتان، شیخوپورہ، سیالکوٹ اور ساہیوال سمیت دیگر اضلاع کے جن کالجز میں سمر کیمپس لگائے جا رہے ہیں، ان کی تعداد 25ہزار سے زائد لگ بھگ بتائی گئی ہے۔ اس میں لاہور سمیت پنجاب بھر میں متعدد کالجز نے طلباء و طالبات سے سمر کیمپ کے نام پر فیسوں کے کارڈ جاری کر دیئے ہیں، جس پر طلباء و طالبات کے والدین نے جہاں شدید احتجاج کیا ہے وہاں ایف اے، ایف ایس سی کے طلباء و طالبات نے بھی شدید احتجاج کیا ہے اور طلباء و طالبات کا کہنا ہے کہ موسم گرما کی شدید گرمی میں کالجز جانا انتہائی مشکل مسئلہ ہے اور ابھی موسم گرما کی چھٹیوں کا اعلان ہوا ہی ہے کہ پرائیویٹ کالجز کی انتظامیہ نے یکم مئی سے سمر کیمپ لگانے کا اعلان کر دیا ہے اور اس میں سمر کیمپ کیلئے فری تعلیم دینے کا جھانسہ دیا جا رہا ہے ۔جبکہ فیسیں بھی وصول کی جا رہی ہے۔ پری میڈیکل او ر پری انجینئرنگ کے طلبا ء و طالبات اور ان کے والدین کا کہنا ہے کہ پرائیویٹ کالجز کی انتظامیہ کو موسم گرما کی شدت کے لحاظ اور اعتبار سے فیصلہ کرنا چاہتے اور اس میں موسم گرما کی چھٹیوں کے دوران گرمی کی شدت انتہائی سخت ہو تو سمر کیمپس کے فیصلہ کو واپس لے لینا چاہئے، جبکہ پرائیویٹ کالجز مالکان کی ایسوسی ایشن کے نمائندگان کا کہنا ہے کہ سمر کیمپوں میں طلبا و طالبات کو فری تعلیم دی جائے گی، اس میں فیسیں نہیں بلکہ معمولی چارجز وصول کئے جائیں گے ایسوسی ایشن کے نمائندگان کا یہ بھی کہنا ہے کہ سمر کیمپوں سے طلبا و طالبات کے تعلیم معیار میں بہتری آئے گی۔

مزید : صفحہ آخر