نقصان دہ ادویات اور چھالیہ کی فروخت پر وفاقی حکومت سے جواب طلب

نقصان دہ ادویات اور چھالیہ کی فروخت پر وفاقی حکومت سے جواب طلب

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )مضر صحت ادویات اور چھالیہ کی روک تھام کے لئے پالیسی نہ بنانے کے خلاف دائر درخواست پرلاہور ہائیکورٹ نے پنجاب حکومت اور وفاقی حکومت سے 12 مئی تک جواب طلب کر لیاہے۔جسٹس مزمل اختر شبیر نے اس سلسلے میں حمزہ ہمایوں ایڈووکیٹ کی درخواست پر نوٹس جاری کردیئے ہیں ، درخواست گزار نے موقف اختیار کیا کہ آئینی طور پر حکومتیں مضر صحت ادویات کی روک تھام کے لئے پالیسی بنانے کی پابند ہیں لیکن ابھی تک وفاقی اور صوبائی سطح پر کوئی پالیسی نہیں بنائی گئی، انہوں نے مزید موقف اختیار کیا کہ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے چھالیہ کو کینسر کی وجہ قرار دیدیا ہے، ڈبلیو ایچ او کی رپورٹ کی روشنی میں چھالیہ پر ممالک میں پابندی لگ رہی ہے لیکن پاکستان میں حکومتیں خاموش تماشائی کا کردار ادا کر رہی ہیں، انہوں نے استدعا کی کہ مضر صحت ادویات کی روک تھام کے لئے پالیسی بنانے کا حکم دیا جائے اور پاکستان میں چھالیہ کی برآمد اور فروخت پر پابندی عائد کی جائے۔

چھالیہ

مزید :

صفحہ آخر -