حبیب ظاہر اغوا مقدمہ نیپال میں درج کرادیا، بھارتی جارحیت پر اب چپ نہیں رہیں گے: سرتاج عزیز

حبیب ظاہر اغوا مقدمہ نیپال میں درج کرادیا، بھارتی جارحیت پر اب چپ نہیں رہیں ...

  

اسلام آباد (ویب ڈیسک) مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے کہا ہے مسئلہ کشمیر او آئی سی کے ایجنڈے میں سرفہرست ہے اور مسئلہ کے حل تک جنوبی ایشیاء میں امن قائم نہیں ہو سکتا، او آئی سی کے 9رکنی وفد نے آزاد کشمیر کا دورہ کیا او ر کنٹرول لائن پر ہونیوالی خلاف ورزیوں کی معلومات حاصل کیں لیکن بھارت نے وفد کو مقبوضہ کشمیر کے دورے کی اجازت نہیں دی، کرنل(ر)حبیب ظاہر کے اغوا کا معاملہ نیپالی حکومت کیسا تھ اٹھایا ہے اور پتا لگانے کی کوشش کی جا رہی ہے ، جبکہ اغوا کا مقدمہ پاکستان اور نیپال میں درج کرادیا گیا ہے ، چیئرمین نے اس حوالے سے عتیق شیخ کی تحریک التوامنظورکرلی، آج اس پربحث کرائی جائیگی،مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم اور بھارتی جارحیت سے متعلق آگاہ کرنے کیلئے اقوام متحدہ اور دیگرعالمی تنظیموں کوخطوط لکھے ہیں، اس حوالے سے عالمی برادری کو اپنا کردار ادا کرنا ہوگا، اس معاملے پر اب چپ نہیں سادھی جا سکتی۔سینیٹ کااجلاس چیئرمین میاں رضا ربانی کی زیرصدارت ہوا،توجہ دلاؤ نوٹس پرجواب دیتے ہوئے مشیر خارجہ نے کہا کرنل(ر)حبیب ظاہر کا نیپال پہنچنے تک انکے خاندان سے رابطہ تھا اور انکا موبائل فون بھارتی سرحد سے 6 کلومیٹر دور بند ہوا، جس ویب سائٹ کے ذریعے کرنل (ر)حبیب نے ملازمت حاصل کی تھی اسے بھی بند کردیا گیا ہے جبکہ ملازمت، ٹکٹ دینے اور نیپال میں استقبال کرنیوالے تمام افراد بھارتی ہی تھے ،کرنل (ر) حبیب کے اہلخانہ نے اس حوالے سے کام کرنیوالے اقوام متحدہ کے ورکنگ گروپ کو خط لکھا ہے ، تمام پاکستانی سفارتخانوں کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ ہفتہ وار بنیاد پر متعلقہ حکومتوں کو مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے حوالے سے آگاہ کریں، بھارتی فوج کی جانب سے ایک کشمیری نوجوان کو جیپ کے آگے باندھ کر انسانی ڈھال کے طور پر استعمال کرنے کے اقدام کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے ۔

مزید :

صفحہ آخر -