ٹیکس افسران کے گھروں پر درجہ چہارم کے ملازمین کی جبری تعیناتی کا سلسلہ جاری

ٹیکس افسران کے گھروں پر درجہ چہارم کے ملازمین کی جبری تعیناتی کا سلسلہ جاری

ملتان ( نیوز رپورٹر ) ریجنل ٹیکس آفس ( آر ٹی او ) ان لینڈ ریونیو ملتان کے افسران کی جانب سے کلاس فور کے بیسیوں ملازمین کی اپنے گھروں میں جبری تعیناتیوں انکار پر دور دراز تبادلوں کی دھمکیاں دی جاتی ہیں ملازمین نے چیف جسٹس پاکستان سے اپیل کی ہے کہ انہوں نے جس طرح پولیس اہلکاروں کو سیاسی نمائندگان اور بیورو کریسی کے بلا جواز پروٹوکول سے نجات دلائی ہے اسی طرح ملک بھر کے(بقیہ نمبر34صفحہ12پر )

آر ٹی او ز کے افسران کی گھریلو ڈیوٹیز سے سینکڑوں ملازمین کو بھی اس غیر قانونی ڈیوٹی سے نجات دلائی جائے مصدقہ ذرائع کے مطابق آر ٹی او ملتان میں تعینات کمشنر ایڈیشنل کمشنر ز اور اسسٹنٹ کمشنرز کے گھروں میں فی کس تین سے چار کلاس کے ملازمین محکمانہ قواعد کے برعکس خدمات کررہے ہیں جن میں نائب قاصد ، خاکروب ، مالی اور سوئیپرز شامل ہیں صرف ملتان کے آر ٹی او کے افسران کے گھروں میں تقریبا 50سے زائد کلاس فور ملازمین تیعنات ہیں جبکہ فی ملازم 25سے 35ہزار روپے قومی خزانے سے ماہانہ وصول کررہے ہیں جبکہ خدمات افسران کے گھروں میں انجام دے رہے ہیں واضح رہے کہ آر ٹی او ملتان میں تعینات افسران کے گھروں میں تعینات سرکاری ملازمین کی قواعد کے برعکس تعیناتی پر حکومتی خزانے کو سالانہ کروڑوں روپے کے نقصانات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے اور یہ سلسلہ گزشتہ کئی سالوں سے جاری ہے ان ملازمین نے نام نہ ظاہر کرنے پر چیف جسٹس پاکستان سے اپیل کی ہے کہ انہیں اس جبری مشقت سے نجات دلائی جائے ۔

ٹیکس افسران

مزید : ملتان صفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...