پنجاب حکومت کی موجودہ زراعت پالیسی بری طرح ناکام ہوچکی ‘ میاں مقصود

پنجاب حکومت کی موجودہ زراعت پالیسی بری طرح ناکام ہوچکی ‘ میاں مقصود

ملتان (سٹی رپورٹر) صدر متحدہ مجلس عمل پنجاب اورامیرجماعت اسلامی پنجاب میاں مقصود احمد نے کہاہے کہ پنجاب حکومت کی موجودہ زراعت پالیسی بری طرح ناکام ہوچکی ہے۔گنے کی طرح اب گندم کے کاشتکاروں کو بھی شدید مشکلات کا سامنا ہے۔خادم اعلیٰ پنجاب کسانوں سے آخری نوالہ بھی چھین لینا چاہتے ہیں۔شوگر مل مالکان کے بعداب پنجاب حکومت کاشتکاروں کا استحصال (بقیہ نمبر38صفحہ12پر )

کرتے ہوئے زراعت کے شعبے کو سخت نقصان پہنچارہی ہے ۔انہوں نے کہاکہ پاکستان ایک زرعی ملک ہے ۔ملکی معیشت کا زیادہ ترانحصار زراعت پر ہے مگر اس اہم شعبے سے حکومت پہلو تہی برت رہی ہے۔ناقص حکمت عملی اور پلاننگ کے فقدان سے کسان دن بدن بدحال ہورہا ہے۔اس وقت گندم سینٹروں پرکسانوں کی تذلیل ہورہی ہے۔حکمرانوں نے ہوش کے ناخن نہ لیے تو جماعت اسلامی صوبے بھر میں شدید احتجاج کرے گی۔ہم کاشتکاروں کے مسائل کے حل تک جدوجہد جاری رکھیں گے۔انہوں نے کہاکہ جماعت اسلامی پنجاب نے اس سے قبل گنے کے کاشتکاروں کے حقوق کے لیے بھرپورآوازاٹھائی ہے۔حکمرانوں کی ساری توجہ سڑکیں بنانے اور توڑنے پر مرکوزہوچکی ہے۔گندم کے کاشتکاروں کوباردانہ نہیں مل رہا۔انہوں نے کہاکہ ملک کی 70فیصد آبادی شعبہ زراعت سے وابستہ ہے۔جب تک کاشتکاروں کے مسائل ان کی دہلیز پر حل نہیں ہوں گے زرعی انقلاب برپانہیں ہوسکتا۔ حکومت سنجیدگی کامظاہرہ کرتے ہوئے موثرزرعی پالیسی وضع کرے۔انہوں نے کہاکہ بھارت سمیت چین،کینیڈا،امریکہ،جرمنی،سوئٹزرلینڈ جیسے ممالک نے اپنے شعبہ زراعت کوترقی دے کر خوشحالی کی منازل طے کی ہیں۔ہمیں بھی ترقی یافتہ ممالک کے تجربات سے فائدہ اٹھانا چاہئے۔دریں اثناء امیر جماعت اسلامی پنجاب میاں مقصوداحمدنے کوآرڈینیٹرایگری کلچرجماعت اسلامی پنجاب سردارمحمداشفاق ڈوگرکوہدایات دیتے ہوئے کہاہے کہ صوبے کے تمام اضلاع سے حکومت کی گندم پالیسی اور کسانوں کے مسائل کے حوالے سے تازہ معلومات اکٹھی کی جائیں۔جماعت اسلامی اپنے کاشتکاربھائیوں کے شانہ بشانہ کھڑی ہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر