چاند دیکھنے کا معاملہ، حکومت کا مفتی پوپلزئی کے ساتھ سختی سے نمٹنے کا فیصلہ

چاند دیکھنے کا معاملہ، حکومت کا مفتی پوپلزئی کے ساتھ سختی سے نمٹنے کا فیصلہ
چاند دیکھنے کا معاملہ، حکومت کا مفتی پوپلزئی کے ساتھ سختی سے نمٹنے کا فیصلہ

اسلام آباد (ویب ڈیسک)حکومت نے رویت ہلال کمیٹی کے متعلق قانون سازی میں رمضان اور عیدالفطر کی چاند دیکھنے کی موقع پر مفتی شہاب الدین پوپلزئی سے سختی سے نمٹنے کا فیصلہ کیا ہے۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

واضح رہے کہ پاکستان میں گزشتہ کئی سالوں سے عید الفطر دو مختلف دنوں پر منائی جاتی ہے کیونکہ پشاور کے مسجد قاسم علی خان کے خطیب مفتی پوپلزئی مرکزی رویت ہلال کمیٹی کے فیصلوں کو خاطر میں نہیں لاتے اور اپنی طرف سے عیدالفطر کا اعلان کرتے ہیں۔ وقت کی کمی کے باعث پارلیمنٹ کو ابھی تک کمیٹی کی جانب سے بل نہیں ملا ہے جو پارلیمان کے دونوں ایوان سے منظور ہوا ہے، اسی وجہ سے وزارت مذہبی امور نے فیصلہ کیا ہے کہ اب اس معاملے کو وزارت داخلہ کو بھیجا جائے گا۔

روزنامہ خبریں کے مطابق مذہبی امور کے کے وفاقی وزیر سرادر محمد یوسف نے کہا ہے کہ یہ ایک اہم مسئلہ ہے اور چاہے انکی حکومت ہو یا نہ ہوں، ملک میں دو عیدیں نہیں ہونا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ یہ مسئلہ ایک دو افراد کی وجہ سے بنا ہو اہے اور وزارت داخلہ کو چاہیے کہ پچھلے سال کے طرح اسی سال بھی مفتی پوپلزئی کو دبئی بھیج دیں، تاکہ ملک میں ایک عید منائی جائے۔وفاقی حکومت نے ابھی تک اس حوالے کوئی ٹھوس قانون سازی نہیں کی ہے۔

یاد رہے کہ وازرت مذہبی امور کی جانب سے کیبنٹ ڈویژن کو پچھلے سال ستمبر کے مہینے میں قانونی مسودے کا ایک ڈرافٹ بھیجا تھا لیکن اسی ڈرافٹ پر ابھی کوئی پیش رفت نہیں ہوئی۔پالیمان میں پیش کئے گئے بل میں یہ تجویز شامل ہے کہ رویت ہلال کمیٹی کے اعلان سے پہلے رمضان اور عیدالفطر کی چاند دیکھنے کے اعلان کرنے والےٹی وی چینل کو دس لاکھ روپے جرمانہ کیا جائے گا اور لائسنس کی معطلی بھی زیر غور ہوگی۔ ڈرافٹ میں یہ تجویز بھی شامل ہے کہ رویت کے بارے میں غلط معلومات فراہم کرنے والوں کو چھ مہینے قید اور پچاس لاکھ جرمانہ کیا جایئگا۔

مزید : علاقائی /اسلام آباد

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...