نوشہرہ،صحافی کا پولیس رویہ کیخلاف بھوک ہڑتال کا اعلان

نوشہرہ،صحافی کا پولیس رویہ کیخلاف بھوک ہڑتال کا اعلان

  

نوشہرہ (بیورورپورٹ) نوشہرہ پولیس کی سینئر اور عمر رسیدہ صحافی کے ساتھ توہین آمیز سلوک سینئر صحافی نے پولیس کے ناروا سلوک پر بھوک ہڑتال کا اعلان کردیا، نوشہرہ کے سینئر اور عمر رسیدہ صحافی کے ساتھ پولیس کے ناروا سلوک پر ملک بھر کے صحافتی حلقوں، سیاسی و سماجی تنظیموں کا بھی احتجاج پولیس رویہ قابل مذمت گذشتہ روز قومی روزنامے اور ملک کے بڑے سوشل نٹ ورک کے بیوروچیف واجد علی خان نے نوشہرہ کینٹ میں واقع اپنی دوکان میں قائم دفتر ایمرجنسی میں کھولا جس پر تھانہ نوشہرہ کینٹ پولیس نے صحافی واجد علی اور انکے بیٹے کو تھانے لاکر انتہائی توہین آمیز رویہ اپنایا مقامی صحافیوں کی موجودگی میں سینئر صحافی کی جان بوجھ کر بے عزتی کی اس واقع پر نوشہرہ پریس کلب کے صحافیوں نے مقامی پولیس کے خلاف شدید احتجاج کیا، انسپکٹر جنرل پولیس خیبر پختونخواہ اور دیگر اعلیٰ حکام سے نوٹس لینے کا مطالبہ کیا تاہم اس حوالے سے مقامی ایس ایچ او اور اے ایس آئی کے خلاف کوئی کاروائی عمل میں ہی نہیں لائی گئی اس حوالے سے گذشتہ روز نوشہرہ پریس کلب میں جنرل سیکرٹری پریس کلب حاجی ظہور احمد کی زیر صدارت میں ایک ہنگامی اجلاس منعقد ہوا جس میں پریس کلب کے تمام ممبران شہنشاہ، سید ولی اللہ شاہ، بخت بسیار، خالد نظیر، واجد علی، حافظ تفہیم الرحمان سمیت دیگر ممبران نے شرکت کی اور اس واقع کی شدید الفاظ میں مذمت اور متعلقہ پولیس اہلکاروں کے خلاف کاروائی کا مطالبہ کیا اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ اگر مذکورہ ایس ایچ او اور اے ایس آئی کو ضلع بدر نہ کیا گیا تو ہم نوشہرہ شوبرا چوک میں احتجاجی کیمپ لگانے پر مجبور ہونگے اجلاس میں سینئر صحافی واجد علی نے ایس ایچ او تھانہ نوشہرہ کینٹ اور اے ایس آئی کے خلاف کاروائی نہ ہونے کی صورت میں بھوک ہڑتال کا اعلان کیا، اجلاس میں صحافیوں نے کہا کہ سینئر صحافی واجد علی پہلے سے شوگر اور بلڈ پریشر کا مریض ہے اور اگر ان کو کسی قسم کا کوئی نقصان پہنچا تو اس کی ذمہ داری نوشہرہ کینٹ پولیس پر عائد ہوگی نوشہرہ کے سینئر صحافی کے ساتھ توہین آمیز رویہ اور بے عزتی کرنے پر ملک بھر کے صحافیوں، سیاسی و سماجی حلقوں نے بھی شدید ردعمل کا اظہار کیا ہے اس سلسلے میں پاکستان مسلم لیگ ن کے صوبائی ترجمان اختیار ولی خان، پاکستان یوتھ ارگنائزیشن کے ضلعی ارگنائزر جاوید خان، جمعیت علما اسلام نوشہرہ کے ضلعی جنرل سیکرٹری مفتی حاکم علی حقانی، نیشنل پریس کلب کے صدر شکیل احمد قرار، سابق تحصیل ناظم نوشہرہ رضا اللہ خان اور دیگر صحافتی، سیاسی و سماجی حلقوں نے مطالبہ کیا ہے کہ نوشہرہ کے سینئر صحافی واجد علی کے ساتھ نوشہرہ کینٹ پولیس کا توہین آمیز رویہ قابل مذمت ہے اور اعلیٰ پولیس احکام سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ ایس ایچ او نوشہرہ کینٹ اور اے ایس آئی کو فوری طور پر تبدیل کرکے غیرجانبدار انکوائری کرائیں۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -