ویکسین اور انسولین کی قلت کا خدشہ،درآمد کنندگان نے تباہ کن خطرے کی گھنٹی بجادی

ویکسین اور انسولین کی قلت کا خدشہ،درآمد کنندگان نے تباہ کن خطرے کی گھنٹی ...
ویکسین اور انسولین کی قلت کا خدشہ،درآمد کنندگان نے تباہ کن خطرے کی گھنٹی بجادی

  

کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)ایک طرف کورونا وائرس تو دوسری جانب انتظامی امور میں رکاوٹ شہریوں کی زندگیوں کیلئے تباہ کن ثابت ہوسکتے ہیں۔  چیف اینالسٹ کا عہدہ ایک ماہ سے خالی ہے جس کی وجہ سے نیشنل کنٹرول لیبارٹری نے سرٹیفکیشن کا عمل روک دیا ہے۔ سرٹیفکیشن رکنے سے زندگی بچانے والی ادویات مثلا ویکسین اور انسولین کی قلت کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے۔

ڈان نیوز کے مطابق درآمد کنندگان اور حکومتی عہدیداران کہتے ہیں وفاقی چیف اینالسٹ جن کے پاس دستخط کا اختیار ہوتا ہے ان کی ریٹائرمنٹ کے بعد سے یہ عہدہ ایک ماہ سے خالی ہے اور ابھی تک ان کی جگہ کسی اور کی تعیناتی کا نوٹیفکیشن جاری نہیں ہوا۔اس حوالے سے ایک درآمدر کنندہ نے ڈان نیوز کو بتایا ہے  کہ اس صورت حال میں  خوف یہ ہے کہ آئندہ ہفتے سے اہم مصنوعات کی قلت ہوسکتی ہے جو ’شدید بیمار افراد کے لیے تباہ کن ہوسکتا ہے‘۔

انہوں نے بتایا کہ سندھ اور خیبرپختونخوا میں اس کے اثرات سامنے آرہے ہیں اور وہاں موجود سٹاک ختم ہونے لگا ہے اگر اس ضمن میں تاخیر کی گئی تو ہزاروں مریضوں کو پریشانی ہوگی۔

انہوں نے کہا جن مصنوعات کی فراہمی کم ہے اس میں ریبیز، ٹیٹنس، ٹائیفائڈ اور ہیپاٹائٹس کی ویکسین، ٹیٹنس یمیونو گلوبین، ریبیز امیونوگلوبین، انسولین اور مزید کئی ادویات شامل ہیں

مزید :

اہم خبریں -قومی -