سابق وزیراعلی سندھ کو اپنے اہل خانہ سے جان کا خطرہ، اہم اعلان کردیا

سابق وزیراعلی سندھ کو اپنے اہل خانہ سے جان کا خطرہ، اہم اعلان کردیا
سابق وزیراعلی سندھ کو اپنے اہل خانہ سے جان کا خطرہ، اہم اعلان کردیا

  

کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن )سینئر مسلم لیگی رہنما اور سابق وزیر اعلی سندھ سیدغوث علی شاہ نےکہا ہے کہ میری دونوں بیٹوں شبیر حیدر شاہ ،ڈاکٹر حیدر علی شاہ اور بیٹی شاہدہ فاطمہ سے کوئی صلح نہیں ہوئی،اس بارے میں میرے بچوں کی جانب سے جھوٹی خبر پھیلائی جارہی ہے کہ میرے بچوں سے میرا کمپرومائز ہوگیا ہے جبکہ حقیقت یہ ہے کہ میرے دونوں بیٹے اور ان کے بچے آج بھی مجھے میری اہلیہ اور بیٹے صفدر حیدر شاہ کو قتل کرنا چاہتے ہیں ۔

کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئےسید غوث علی شاہ نے کہا کہ جب سے میرا بیٹا صفدر حیدر شاہ برطانیہ سے تعلیم حاصل کر کے واپس آیا ہے،میرے دونوں بیٹے اور بیٹی اس لیے مخالف ہوگئے ہیں کہ ان کا خیا ل ہے کہ صفدر شاید میرا سیاسی جانشین بنے گا،میں نے صرف اپنے بچوں کے خلاف ایک مقدمہ درج کرایا تھا او ر میرے خلاف اب تک پانچ مقدمات درج کرائے جاچکے ہیں،آخری مقدمہ ڈاکٹر علی حیدر شاہ نے درج کرایا ہے ۔

انہوں نےکہاکہ میں نےاپنے بچوں کو عاق کردیا ہےاوران سےمیرا کوئی واسطہ نہیں لیکن میرے خلاف سازشیں جاری ہیں جس کی وجہ سے میری اہلیہ اور بیٹے صفدر کی جان کو شدید خطرہ ہے، میرے دونوں بیٹے ،بیٹی اور ان کے بچوں نے مجھ سے کوئی معافی طلب نہیں کی اور نہ ہی اپنی غلطی تسلیم کی ،پھر کیسے ان سے صلح ہوسکتی ہے؟ میں نے اپنی زندگی شبیر حیدر شاہ ،علی حیدر شاہ اور بیٹی شاہدہ فاطمہ اور ان کے بچوں کو مقام دلانے میں صرف کی اور یہاں تک کہ ایک پوتے کو یونین کونسل کا چیئرمین بھی بنوایا ۔

سید غوث علی شاہ نےکہاکہ ہمارامذہب اسلام والدین کی خدمت اور فرمانبرداری کا حکم دیتا ہے،یہ کیسی اولا د ہےجو میری دشمن بن گئی ہے؟میرے بچوں نے میری زرعی زمین پر بھی قبضہ کرلیا تھا تاہم وہ زمین میں نے واپس لے کر کاشت کاری کےلیےٹھیکے پر دے دی ہے،حکومت سندھ اور پولیس کا میرے ساتھ تعاون جاری ہےاور مجھے ضرورت کے مطابق سیکیورٹی بھی فراہم کی گئی ہے ۔

مزید :

قومی -