لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے کیخلاف پنجاب سمیت ملک بھر میں وکلاءکی ہڑتال، عدالتوں کا بائیکاٹ ، کوئی وکیل پیش نہ ہوا، سائلین پریشان

لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے کیخلاف پنجاب سمیت ملک بھر میں وکلاءکی ہڑتال، ...
لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے کیخلاف پنجاب سمیت ملک بھر میں وکلاءکی ہڑتال، عدالتوں کا بائیکاٹ ، کوئی وکیل پیش نہ ہوا، سائلین پریشان

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے کیخلاف پنجاب سمیت ملک بھر میں وکلاءکی ہڑتال، عدالتوں کا مکمل بائیکاٹ ، کوئی وکیل عدالت میں پیش نہ ہوا،جس کے باعث سائلین کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا، تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز لاہور ہائیکورٹ نے ملتان بنچ کے ججز سے بدتمیزی کے معاملے پر صدر ملتان ہائیکورٹ بار شیر زمان کو گرفتار کرنے کے احکامات جاری کئے تھے جس پر وکلاءنے شدیداحتجاج اور ہنگامہ آرائی کی اوروکلاءتنظیموں کی جانب سے آج ملک گیر ہڑتال کا اعلان کیا تھا جس پر لاہور، ملتان، اسلام آباد، راولپنڈی،گوجرانوالہ، فیصل آباد، قصور،کوئٹہ، پشاور،کراچی میںبارز پر سیاہ پرچم لہرا دیئے گئے اور وکلاءنے عدالتوں کا مکمل بائیکاٹ کیا ،وکلاءکی ہڑتال کے باعث سائلین کو شدید مشکلات کا سامنا ہے، لاہور ہائیکورٹ کے احاطہ میں وکلاءکا آج بھی احتجاج جاری ہے ، لاہورہائیکورٹ کے اطراف مال روڈپرپولیس کی بھاری نفری تعینات ہے جبکہ ہائیکورٹ کے اندراورباہرکنٹینرزکھڑے کردیئے گئے،سکیورٹی کیلئے رینجرزاہلکار بھی تعینات ہیں،فیصل آباد میں بھی ڈسٹرکٹ بار ایسوسی کی جانب سے پنجاب بار کونسل کی اپیل پر وکلا کی جانب سے عدالتوں کا بائیکاٹ کیا گیا اور سیشن کورٹ کے سامنے احتجاجی کیمپ بھی لگایا گیا، جس میں شریک وکلا کی جانب سے نعرے بازی بھی کی گئی۔ وکلا کا کہنا تھا کہ جب تک ملتان بار کے صدر کےخلاف مقدمہ واپس نہیں لیا جاتا احتجاج جاری رکھا جائے گا، ملتان میں وکلاءکچہری چوک میں سراپا احتجاج ہیں اور سکیورٹی کیلئے خاص انتظامات کئے گئے ہیں ، سندھ بار کونسل، ہائیکورٹ بار، کراچی بار، ملیربار کی اپیل پر وکلا نے ہڑتال کی، وکلاءنے ہائیکورٹ، سٹی کورٹ اور ملیر کورٹس کے عدالتی امورکا بائیکاٹ کیا۔ مقدمات کی سماعت نہ ہونے سے سائلین کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ جیل سے قیدیوں کو عدالت بھی نہیں لایا گیا۔ اہم مقدمات کی سماعت ججز اپنے چیمبر میں کر رہے ہیں۔ چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ اور دیگر ججز نے مقدمات کی سماعت شروع کر دی، سندھ ہائیکورٹ بار کے صدر نے چیف جسٹس سے ملاقات کی اور انہیں مقدمات کی سماعت ملتوی کرنے کی درخواست کی ۔گوجرانوالہ، قصور ، راولپنڈی اور اسلام آباد میں وکلاءنے کام چھوڑ دیا اور ملتان ہائیکورٹ بار کے صدر کی گرفتاری کے احکامات واپس لینے کا مطالبہ کر رہے ہیں، وکلاءکا کہنا ہے کہ گرفتاری کے احکامات واپس لینے تک عدالتوں میں پیش نہیں ہونگے،ادھر سندھ میں کراچی بار، سندھ بار اور ملیر بارکے وکلاءبھی عدالتوں میں پیش نہیں ہوئے ، پشاور اور کوئٹہ بھی وکلاءصدر ملتان بار کی گرفتاری کے احکامات کے خلاف سراپا احتجاج ہیں اور ان سے اظہار یکجہتی کیلئے عدالتوں کا مکمل بائیکاٹ کر رکھا ہے۔

مزید : لاہور /اہم خبریں