ریڈیو ملتان کا سٹوڈیو ثریا ملتانیکر کے نام سے منسوب کرنے کا فیصلہ 

ریڈیو ملتان کا سٹوڈیو ثریا ملتانیکر کے نام سے منسوب کرنے کا فیصلہ 

  

 ملتان (سٹاف رپورٹر)نامور مغنیہ ثریاملتانیکر کی فنی خدمات کے اعتراف میں ریڈیو پاکستان ملتان اپنا ایک سٹوڈیو جلد ان کے نام سے منسوب کرے گا یہ بات سٹیشن ڈائریکٹر ریڈیو پاکستان ملتان کوثر ثمرین نے میڈم ثریا ملتانیکر کی خیریت دریافت کرنے کے موقع پر ان سے گفتگو کرتے ہوئے کہی،اس موقع پر ملتان سے  مکالمہ کے عنوان سے شروع کئے گئے نئے پروگرام میں انٹرویو دیتے ہوئے میڈم ثریا ملتانیکر نے کہا کہ انہوں نے ریڈیو پاکستان لاہور سے پندرہ (بقیہ نمبر30صفحہ6پر)

سال کی عمر میں گائیکی شروع کی اور زیادہ تر کلاسیکل گاتی رہیں،انہوں نے کہا کہ انہوں نے ریڈیو پاکستان لاہور کے بعد ریڈیو پاکستان کراچی، ڈھاکہ اور دوسرے ریڈیو اسٹیشنوں سے گایا اور خوب داد سمیٹی انہوں نے کہا کہ 1960 اور 1965 کے عشرے میں انہوں نے بڑی محفلوں میں گانا شروع کیا اور کلاسیکل کے علاوہ غزل اور کافی بھی گائی،انہوں نے کہا کہ انہوں نے سات سال کی عمر میں ایک سارنگی نواز استاد سے موسیقی کی تعلیم پائی اور انہی کی رہنمائی میں اپنے فن کو اگے بڑھایا۔ ثریا ملتانیکر نے کہا کہ شہرِ ملتان سے ان کی وابستگی عقیدت اور جڑی یادیں کبھی نہ بھولنے والی ہیں،ملتان اولیاء اور امن پسند لوگوں کا شہر ہے اس شہر اور اس کے باسیوں سے انہوں نے خوب عزت اور داد سمیٹی ہے۔انہوں نے کہا کہ ملتان سے ان کے علاوہ اقبال بانواور ناہید اختر نے لا زوال گایا اور خوب داد سمیٹی ہے،ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ نوجوان نسل اب پھرموسیقی کی طرف راغب ہور ہی ہے اور کئی اچھی آوازیں سامنے آئی ہیں،انہوں نے کہا کہ ماضی کے کئی حکمرانوں نے موسیقی کی بے پناہ پذیرائی کی جن میں جنرل محمد ایوب خان،ذوالفقار علی بھٹو، اور کئی نام شامل ہیں، ریڈیو پاکستان ملتان کے پروگرام منیجر ریاض میلسی نے ثریا ملتانیکر کی خدمات کو خراج عقیدت پیش کرتے کہا کہ وہ نہ صرف اچھی مغنیہ ہیں۔ ثریا ملتانیکر کی دختر راحت ملتانیکر نے کہا کہ انہوں نے اپنی ماں سے موسیقی سیکھی اور معاشرے میں نمایاں مقام حاصل کیا۔ 

مزید :

ملتان صفحہ آخر -