امیر المومنین خلیفہ دوئم حضرت فاروق اعظمؓ  کایوم شہادت عقیدت احترام سے منایا گیا

  امیر المومنین خلیفہ دوئم حضرت فاروق اعظمؓ  کایوم شہادت عقیدت احترام سے ...

  

کبیروالا(نامہ نگار)  امیر المومنین،خلیفہ دوئم،امام العادلین،مراد رسول کریم ؐفاتح عرب وعجم،امام متقین والمسلین(بقیہ نمبر19صفحہ6پر)

،خسر نبی کریم ؐحضرت سیدنا فاروق اعظم رضی اللہ تعالی عنہ کا یوم شہادت مذہبی عقیدت واحترام کے ساتھ منایا گیا،مدارس،مساجد اور رہائشگاہوں میں قرآن خوانی کی گئی۔تفصیل کے مطابق ملک بھر کی طرح کبیروالا شہر اور مضافات میں انتہائی عقیدت واحترام کے ساتھ منایا گیا۔ جامعہ دارالعلوم عیدگاہ کبیروالا میں شیخ الحدیث مولانا ارشاد احمد، ناظم تعلیمات وممبر ڈویژنل امن کمیٹی مولانا مفتی حامد حسن،جامعہ غوثیہ مہریہ نوریہ کبیروالا میں ناظم تعلیمات مولانا مفتی عبداللطیف سعیدی،جامعہ خلفاء راشدین کبیروالا میں مہتمم مولانا عبدالخالق رحمانی،جامعہ سراج العلوم عیدگاہ کبیروالا میں مہتمم مولانا محمد عمر فاروق اصغر،جامعہ رضویہ شمس العلوم کبیرولامیں مہتمم صاحبزادہ مفتی نصیر الدین نصیر رضوی،ایوان صحافت کبیروالا کی تقریب میں مرکزی انجمن تاجران کبیروالا کے صدر شیخ راشد ندیم سعیدی، مولانا عبدالمجید انور،حاجی محمد ارشد سنگا،حفیظ سعیدی،محمد ارشد قاسمی،جنید رضا عطاری اور دیگر نے اپنے خطابات میں امیر المومنین،خلیفہ دوئم حضرت سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی شخصیت،اسلامی خدمات اور کارناموں پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ حضرت سیدنا فاروق اعظمؓ کی خدمات، جرات و بہادری، فتوحات، شان دار کردار اور کارناموں سے اسلام کا چہرہ روشن ہے، آپ ؓ کاعدل و انصاف کمال، آپ ؓ کی اسلامی فتوحات بے مثال،دین کے لیے قربانیاں لازوال اورآپ ؓ کاتقوی اور بصیرت شاندار ہیں۔ امیر المومنین سیدنا عمرؓ کا زمانہ خلافت اسلامی فتوحات کا دور تھا،جس میں اسلامی سلطنت کی حدود 22 لاکھ مربع میل تک پھیلی ہوئی تھیں،آپ ؓنے دو بڑی طاقتوں ایران اور روم کو شکست دی، بیت المال کا شعبہ فعال کیا، اسلامی مملکت کو صوبوں اور اضلاع میں تقسیم کیا، عشرہ خراج کا نظام نافذ کیا اور پولیس کا محکمہ قائم کیا۔خلیفہ دوئم سیدنا حضرت عمرفاروق رضی اللہ عنہ کو مراد رسول صلی اللہ علیہ وسلم ہونے کا اعزاز حاصل ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ ”میرے بعد اگر کوئی نبی ہوتا تو وہ حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ ہوتے“۔آپؓ کی کئی آراء کو ایسی قبولیت حاصل ہوئی کہ ان کی تائید میں آیات قرانی کا نزول ہوا، جن میں مسجد حرام میں مقام ابراہیم پر نماز پڑھنے، شراب کو حرام قرار دینے اور پردے کے حوالے سے آراء شامل ہیں۔مسلم ممالک حکمران سیدنا حضرت فاروق اعظم کے کردار اور طرز حیات سے رہنمائی حاصل کرکے مصائب اور مسائل سے نجات حاصل کرسکتے ہیں۔

یوم شہادت

مزید :

ملتان صفحہ آخر -