محرم الحرام کے پر امن انعقاد کیلئے سیکورٹی کے فل پروفاقدامات اٹھائے ہیں، سی سی پی او 

  محرم الحرام کے پر امن انعقاد کیلئے سیکورٹی کے فل پروفاقدامات اٹھائے ہیں، ...

  

پشاور(کرائم رپورٹر) کیپٹل سٹی پولیس پشاور نے محرم الحرام کے دوران امن وامان کی قیام کو ممکن بنانے کیلئے گزشتہ ماہ سے جاری کاوشوں میں مختلف مکتبہ فکر سے تعلق رکھنے والے علماء کرام،تاجر رہنماؤں، ضلعی انتظامیہ اور دیگر اداروں سے خصوصی میٹنگز کرکے سکیورٹی انتظامات کو فل پروف بنانے کیلئے اہم اقدامات کئے ہیں عوام کی جان و مال کی تحفظ کیلئے مختلف جرائم میں ملوث اشتہاری ملزمان کے خلاف پچھلے دو ہفتوں میں انٹیلی جنس بیس سرچ اینڈ سٹرائیک آپریشنز کے دوران 1130 ملزمان کو گرفتار کیا ہے رواں سال کے دوران پشاور پولیس نے دو لاکھ افراد کا ڈیجیٹل ڈیٹا اکٹھا کرایا ہے جبکہ گزشتہ ماہ سرائیوں، گیسٹ ہاوسز اور ہوٹلز میں موجود ہزاروں کرایہ دارافرادکا ڈیٹا چیک کرکے غیر قانونی1500کرایہ داروں کے خلاف قانونی کاروائی عمل میں لائی گئی ہے جبکہ محرم الحرام کو فل پروف سکیورٹی بنانے کیلئے دس ہزارچھ سو پولیس،پاک آرمی اور ایف سی کے افسران و اہلکار تعینات کئے جائینگے،پشاور میں ہونے والے 116 جلوسوں کے راستوں کو بم ڈسپوزل یونٹ اور سنیفر ڈاگز کے ذریعے سویپنگ کی جائے گی جبکہ شہر میں نصب کئے گئے 100 سی سی ٹی وی کیمروں کے ذریعے تمام راستوں، جلوسوں اور دیگر اہم و حساس مقامات کی نگرانی کی جائے گی،جلوسوں کی گزرگاہوں میں اونچی عمارتوں پر ماہر نشانہ باز اہلکاروں کے ساتھ ساتھ 43گن پوسٹ،64 انٹری پوائنٹس پر بھی اہلکار تعینات کئے جائینگے،سکیورٹی پلان کے مطابق شہر کے تمام62 امام بارگاہوں اور 9سبیلوں کو فول پروف سکیورٹی فراہم کر دی گئی ہے۔ سی سی پی او محمد علی گنڈا پورتفصیلات کے مطابق سی سی پی او محمد علی گنڈا پور اور ایس ایس پی آپریشن منصور امان نے پولیس لائن میں میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ محرم الحرام میں امن وامان کی قیام کو ممکن بنانے کیلئے گزشتہ ماہ سے جاری کاوشوں میں مختلف مکتبہ فکر سے تعلق رکھنے والے علماء کرام،تاجر رہنماؤں، ضلعی انتظامیہ اور دیگر اداروں سے خصوصی ملاقاتیں کی ہیں جس کے دوران سکیورٹی انتظامات کو فل پروف بنانے کیلئے اہم اقدامات کئے گئے ہیں غیر قانونی کرایہ داروں اور مختلف جرائم میں ملوث اشتہاری ملزمان کے خلاف انٹیلی جنس بیسز پر سرچ اینڈ سٹرائیک آپریشنز کرکے کرایہ داروں کیساتھ ساتھ سرائیوں، گیسٹ ہاوسز اور ہوٹلز میں رہائش پزیر 7750 افرادکو چیک کرکے 1500افراد کے خلاف قانونی کاروائی عمل میں لائی گئی ہے اسی طرح امن و امان کی صورتحال کو بر قرار رکھنے کیلئے پچھلے دو ہفتے کے دوران1130 اشتہاری ملزمان کو بھی گرفتار کیا ہے، محرم الحرام کے دوران دس ہزارچھہ سو پولیس افسران و اہلکاروں تعینات کئے جائینگے، شہر میں نصب شدہ100 سی سی ٹی وی کیمروں کے ذریعے تمام راستوں، جلوسوں اور دیگر اہم و حساس مقامات کی نگرانی کے ساتھ ساتھ مشتبہ افراد پر بھی کڑی نظر رکھی جائے گی، تمام 116 جلوسوں کو تھری لئیر سکیورٹی فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ جلوسوں کی گزرگاہوں میں موجود تمام اونچی عمارتوں پر ماہر نشانہ باز اہلکاروں کے ساتھ ساتھ43 گن پوسٹ اور64 پلگنگ پوائنٹس پر بھی اہلکار تعینات کئے گئے ہیں محرم کے دوران شہر کی سکیورٹی کو فول پروف بنانے کے لئے بکتر بند گاڑیاں بھی حساس مقامات پر موجود رہیں گی جبکہ آر آر ایف، اے ٹی ایس،کیو آر ایف، لیڈیز پولیس، بی ڈی یو، سٹی پٹرولنگ فورس کے جوانوں کے ساتھ ساتھ ڈی ایس بی کے جوان بھی سکیورٹی کو موثر بنانے کے لئے اپنے فرائض سر انجام دیں گے، محرم کے دوران ن ٹریفک کو رواں دواں رکھنے کے لئے ٹریفک پلان بھی تشکیل دیا ہے، اسی طرح تمام اہم جلوسوں کی ڈرون کیمروں کے ذریعے فضائی نگرانی کے ساتھ ساتھ نویں اور دسویں محرم کو شہر کی فضائی نگرانی کا بھی فیصلہ کیا گیاہے شہر کے تمام داخلی و خارجی راستوں اور اہم مقامات پر سپیشل ناکہ بندیاں لگا کر چیکنگ مزید سخت کر دی گئی ہے جس کے دوران شہر میں داخل ہونے والی تمام گاڑیوں کا سختی سے چیکنگ شروع کر دی گئی ہے جبکہ شہر میں افغان مہاجرین کے داخلہ پر بھی پابندی لگانے کا فیصلہ کیا گیا ہے، اندرون شہر کی سکیورٹی کو مزید موثر بنانے کے لئے محرم کے آخری ایام میں تمام گاڑیوں کے داخلہ پر مکمل پابندی ہو گی محرم الحرام کے دوران جلوسوں، امام بارگاہوں اور حساس مقامات سمیت شہر بھر کی مانیٹرنگ کے لئے جدید سہولیات سے آراستہ کوہاٹی چوک میں سپریم کمانڈ پوسٹ تھانہ خان رازق شہید میں کنٹرول رول جبکہ مختلف اہم مقامات پر 5سب کمانڈ پوسٹ بھی قائم کر دی گئی ہے جس میں بی ڈی یو، لیڈیز پولیس، ڈی ایس بی، ایمبولینس، ریسکیو 1122،فائر بریگیڈ،واپڈا،نادرن سوئی گیس، ضلعی انتظامیہ کے اہلکار اوردیگر اداروں سے تعلق رکھنے والے افسران و اہلکار ہمہ وقت موجود رہیں گے، گزشتہ سال کی طرح امسال بھی کسی بھی ناخوشگوار واقعے سے بچنے کی خاطر نویں اور دسویں محرم الحرام کے روز شہر میں موبائل سروس بند رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جس کے لئے متعلقہ حکام کو مراسلہ ارسال کر دیا گیا ہے

مزید :

پشاورصفحہ آخر -