لاہور میں بارش سے سڑکیں تباہ، سیوریج سسٹم بند، گلی، محلے تالاب بن گئے 

لاہور میں بارش سے سڑکیں تباہ، سیوریج سسٹم بند، گلی، محلے تالاب بن گئے 

  

 لاہور(جاوید اقبال)پنجاب کے دارالحکومت لاہور میں حالیہ بارشوں نے سڑکوں کو ادھیڑ کر رکھ دیا جبکہ شہر میں غلاظت گندگی کیچڑ اور خالی پلاٹ پانی سے بھرے ہوئے ہیں، شہر میں واقع سبزی اور پھل منڈیاں اور زرعی اجناس کی سب سے بڑی اکبری منڈی غلاظت اور دلدل میں تبدیل ہوگئی ہے، پسماندہ آبادیوں کے گلی کوچوں میں بارش کا پانی جمع ہے جسے نکالا نہیں جا سکاجس کے باعث ڈینگی مچھروں کے حملے کا خدشہ پیدا ہو گیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق حالیہ بارشوں نے شہر لاہور کے اندر ترقیاتی اداروں اور محکموں کے چہروں سے نقاب الٹ دیا ہے۔ شہر کی 60 فیصد سے زائد سڑکیں اکھاڑ پچھاڑ کا شکار ہیں اسی طرح سولر سسٹم بری طرح ناکام ہوگیا ہے۔ گلیوں اور بازاروں میں پانی جمع ہے جس سے بیماریاں پھیلنے کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے۔بتایا گیا ہے کہ واسا نے بڑی سڑکوں پر سے پانی نکال دیا ہے لیکن سیوریج سسٹم کی صفائی نہیں کرسکا جس کے باعث گلیوں بازاروں میں سیوریج بند ہونے سے گندا پانی پھیلا ہوا ہے اور شہری متعلقہ واسا کے دفاتر کو بار بارشکایات کر رہے ہیں مگر سسٹم بحال نہیں کیا جا رہا۔ دوسری طرف شہر کی 50 فیصد سے زائد آبادیوں میں گھروں کے اندرپینے کیلئے بدبودار پانی آرہا ہے جسے پینا تو درکنار شہری غسل بھی نہیں کر سکتے۔ سب ڈویژن فتح گڑھ،سب ڈویژن ہربنس پورہ،ڈویژن غازی آباد کے علاقے مغلپورہ،مہر فیاض کالونی کے ڈبل اے بلاک کے رہائشیوں نے بتایا ہے کہ بارشی پانی پر ڈینگی مچھر پرورش پا رہے ہیں۔ادھرشہر کی سب سے بڑی پھل و سبزی منڈی بادامی باغ سمیت دیگر منڈیاں جن میں کانا منڈی،اقبال ٹاؤن منڈی، سنگھ پورہ منڈی،لواڑا منڈی کچرا منڈی کا منظر پیش کر رہی ہیں اور ماحول تعفن زدہ ہے۔ناکافی سیوریج سسٹم اور صفائی نہ ہونے سے جا بجا کچرے کے ڈھیر انتظامیہ کو منہ چڑا رہے ہیں۔ آڑھتی اور خریدار، سبزیاں، پھل لینے کے لیے کیچڑ کی دلدل عبور کرنے پر مجبورہیں۔میٹروپولیٹن کارپوریشن آفیسر علی عباس بخاری نے کہا ہے کہ یہ ذمہ داری واسا اور مارکیٹ کمیٹیوں کی انتظامیہ کی ہے۔ اسکوتاہی پر جواب طلبی کریں گے۔

سڑکیں تباہ 

مزید :

صفحہ اول -