پراپرٹی ٹیکس میں چھوٹ بارے اہم قدم اٹھایا ہے، کامران بنگش 

پراپرٹی ٹیکس میں چھوٹ بارے اہم قدم اٹھایا ہے، کامران بنگش 

  

پشاور(سٹاف رپورٹر)وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا کے معاون خصوصی برائے اطلاعات و بلدیات کامران بنگش نے کہا ہے کہ صوبائی حکومت نے پراپرٹی ٹیکس میں چھوٹ بارے اہم اقدام اٹھایا ہے جبکہ اسی سلسلے میں دو فیصد پراپرٹی ٹیکس کے بدلے ٹی ایم ایز کو 50 کروڑ کی پہلی قسط جاری کر دی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پراپرٹی ٹیکس کی مد میں تعمیراتی شعبہ کے لئے صوبائی حکومت نے 4 ارب سے زیادہ ریلیف دیا ہے۔وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا کا ذکر کرتے ہوئے معاون خصوصی کامران بنگش نے کہا کہ وزیراعلیٰ محمود خان نے محکمہ بلدیات کے ملازمین کی تنخواہوں بارے اپنا وعدہ ایفا کیا۔ اب تنخواہوں اور اخراجات کی مد میں محکمہ بلدیات کو مالی سال میں خزانہ سے 4 ارب ملیں گے۔بعض تحصیل میونسپل انتظامیہ کے ملازمین کی تنخواہوں بارے بات کرتے ہوئے معاون خصوصی کامران بنگش نے کہا کہ پہلی قسط کی ریلیز سے ملازمین نے سکھ کا سانس لیا۔ حکومت کو بھی احساس ہے کہ ملازمین کو اجرت و تنخواہیں بروقت ملیں۔ انہوں نے کہا کہ عوام اور ملازمین دونوں کی فلاح وبہبود ہماری ترجیحات میں شامل ہے۔محکمہ بلدیات میں جاری اصلاحات کی جانب اشارہ کرتے ہوئے معاون خصوصی کامران بنگش نے کہا کہ بلدیات سمیت ہر شعبہ میں ترقی و اصلاحات کا عمل جاری ہے تاکہ پاکستان کو وزیراعظم عمران خان کے وژن کے مطابق مدینہ کی طرز پر اسلامی فلاحی ریاست بنایا جا سکے۔ 

پشاور(سٹاف رپورٹر)پشاور ترقیاتی ادارہ نے صوبائی مشیر برائے بلدیات و اطلاعات کامران بنگش کی ہدایات کی روشنی میں ترقیاتی ٹھیکوں میں زیادہ شفافیت کی جانب بڑا قدم اٹھاتے ہوئے ای بڈنگ کا آغاز کر دیا ہے اور اس نئے نظام کے تحت حیات آباد ڈیٹور فیز ٹو کی الیکٹرانک نیلامی بھی کر دی ہے جو ایک ارب روپے کی لاگت سے مختصر ترین وقت میں مکمل ہونے والا اہم ترین منصوبہ ہو گا وزیراعلیٰ محمود خان عنقریب ڈیٹور روڈ فیز ٹو کا باضابطہ افتتاح کریں گے اس ذیلی شاہراہ سے حیات آباد میں بھاری گاڑیوں اور ٹریفک اژدھام کے مکمل خاتمے اور ماحول دوست ٹریفک نظام کے قیام میں بڑی مدد ملے گی پی ڈی اے کے ڈائریکٹر جنرل سید ظفر علی شاہ کے مطابق ادارے نے ای ٹینڈرنگ کا نظام پہلے ہی شروع کیا تھا جس کے تحت ٹھیکیدار آن لائن ترقیاتی ٹھیکوں کیلئے رجسٹریشن کرواتے جبکہ اب ای بڈنگ جیسے اقدامات کی بدولت ٹھیکیدار دفاتر کے چکر لگائے بغیر میرٹ پر ٹھیکے لیں گے اور ترقیاتی منصوبوں کی جلد از جلد تکمیل کر سکیں گے۔

مزید :

صفحہ اول -