لبِ خاموش سے اظہارِ تمنا چاہیں

لبِ خاموش سے اظہارِ تمنا چاہیں
لبِ خاموش سے اظہارِ تمنا چاہیں

  

لبِ خاموش سے اظہارِ تمنا چاہیں Lab e Khamosh Say Izhaar  e  Tamanna Chahen

بات کرنے کو بھی تصویر کا لہجہ چاہیں aat Karnay Ko BHi Tasveer Ka Lehja Chahen

تُو چلے ساتھ تو آہٹ بھی نہ آئے اپنی Too Chalay Saath To Aahatt Bhi Na Aaey Apni

درمیاں ہم بھی نہ ہوں یوں تُجھے تنہا چاہیں Darmiaan Ham Bhi Na Hon Yun Tujhay Tanha Chahen

ظاہری آنکھ سے کیا دیکھ سکے گا کوئی zaahiri Aankh Say Kia Dekh Sakay Ga Koi

اپنے باطن پہ بھی ہم فاش نہ ہونا چاہیں  Apnay Batan Pe Bhi Ham Faash na Hona Chahen

جسم پوشی کو ملے چادرِ افلاک ہمیں ism Poshi Ko Milay Chadar  e  Aflaak Hamen

سَر چھُپانے کے لئے وسعتِ صحرا چاہیں  Sar Chupaanay K Liay wusat  e  Sehra Chahen

خواب میں روئیں تو احساس ہو سیرابی کو  Khaab Men Roen To Ehsaas Ho Sairaabi Ka

ریت پر سوئیں مگر آنکھ میں دریا چاہیں Rait Par Saoen Magar Aankh Men Darya Chahen

بھینٹ چڑھ جاؤں نہ میں اپنے ہی خیر و شَر کی Bhaint Charrh Jaaun Na  Main Apnay Hi Khair  o  Shar Say

خونِ دل ضبط کریں، زخمِ تماشا چاہیں Khoon e  Dil Zabt Kren, Zakhm  e  Tamaasha Chahen

زندگی آنکھ سے اوجھل ہو مگر ختم نہ ہو                    Zindagi Ankh Say Ojhal Ho Magar Khatm Na Ho

اِک جہاں اور پسِ پردۂ دنیا چاہیں Ik Jahan Pas  e Parda  e  Dunya Chahen

آج کا دن تو چلو کٹ گیا جیسے بھی کٹاAaj Ka Din To Chalo Katt Gia Jaisay Bhi Katta

اب خداوند سے خیریتِ فردا چاہیں Ab Khusawand Say Khairiat  e  farda Chahen

ایسے تیراک بھی دیکھے ہیں مظفر ہم نے Aik Tairaak Bhi Dekhay Hen MUZAFFAR Ham Nay

غرق ہونے کے لئے بھی جو سہارا چاہیں Gharq Honay K Liay Bhi Jo sahaara Chahen

شاعر: مظفر وارثی                                                         Poet: Muzaffar Warsi

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -