دل تجھے ناز ہے جس شخص کی دلداری پر

دل تجھے ناز ہے جس شخص کی دلداری پر
دل تجھے ناز ہے جس شخص کی دلداری پر

  

دل تجھے ناز ہے جس شخص کی دلداری پر

دیکھ اب وہ بھی اُتر آیا اداکاری پر

میں نے دشمن کو جگایا تو بہت تھا لیکن

احتجاجاً نہیں جاگا مری بیداری پر

آدمی، آدمی کو کھائے چلا جاتا ہے

کچھ تو تحقیق کرو اس نئی بیماری پر

کبھی اِس جرم پہ سر کاٹ دئے جاتے تھے

اب تو انعام دیا جاتا ہے غدّاری پر

تیری قربت کا نشہ ٹوٹ رہا ہے مجھ میں

اس قدر سہل نہ ہو تو مری دشواری پر

مجھ میں یوں تازہ ملاقات کے موسم جاگے

آئینہ ہنسنے لگا ہے مری تیاری پر

کوئی دیکھے بھرے بازار کی ویرانی کو

کچھ نہ کچھ مفت ہے ہر شے کی خریداری پر

بس یہی وقت ہے سچ منہ سے نکل جانے دو

لوگ اُتر آئے ہیں ظالم کی طرف داری پر

شاعر: سلیم کوثر

Dil Tujhe Naaz  Hai Jis Shakhs Ki Dildaari par

Dekh! Ab Woh Bhi Utar Aayaa Adaakaari Par

MaiN  Ne  Dushman KoJagayaa To Bahut Tha Lekin

Ehtejaajan NahiN Jaaga  Meri Bedaari Par

Aadmi Aadmi Ko Khyaaye Chala Jaataa Hai

KuchhTo Tahqeeq Karo Is Nayi Beemari Par

Kabhi Is Jurm Pe Sar KaaT Diye Jaate The

Ab To In’aam Diya Jata Hai Ghaddaari Par

Teri Qurbat Ka Nasha TooT RahaHai Mujh Mein

Is Qadar Sahl Na HoTu Meri Dushwaari Par

Mujh Mein YuN Taaza Mulaqat Ke MausamJaage

Aayiina HaNsne Lagaa Hai Meri Taiyyari Par

Koi Dekhe Bhare Baazaar Ki Veerani Ko

Kuch Na Kuch Muft Hai Har Shai Ki Kharidari Par

Bus Yahi Waqt Hai Sach Munh Se Nikal Jaane Do

Log Utar Aaye Hain Zaalim ki Tarafdaari Par

Poet: Saleem Kousar

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -