مری طلب، مری رسوائیوں کے بعد کُھلا

مری طلب، مری رسوائیوں کے بعد کُھلا

  

مری طلب، مری رسوائیوں کے بعد کُھلا

وہ کم سُخن، سُخن آرائیوں کے بعد کُھلا

وہ میرے ساتھ ہے اور مُجھ سے ہمکلام بھی ہے

یہ ایک عمر کی تنہائیوں کے بعد کُھلا

میں خود بھی تیرے اندھیروں پہ مُنکشف نہ ہوا

ترا وجود بھی پرچھائیوں کے بعد کُھلا

عجب طلسمِ خموشی تھا گھر کا سناٹا

جو بام و در کی شناسائیوں کے بعد کُھلا

میں آب و خاک سے مانوس تھا، پر کیا کرتا

درِ قفس مری بینائیوں کے بعد کُھلا

مجھے یہ جنگ بہرحال جیتنی تھی، مگر

نیا محاذ ہی پسپائیوں کے بعد کُھلا

مجھے بھی تنگیِ آفاق کا گلہ ہے سلیم

یہ بھید مجھ پہ بھی گہرائیوں کے بعد کُھلا

 شاعر:سلیم کوثر

٘٘                                             Miri Talab, Miri Ruswaaion K Baad Khula

                         Wo Kam Sukhan Sukhan Araaion K Baad Khula

Main Khud Bhi Teray Andhairon Pe Mukashif Na Hua

                                             TiraWajood Bhi Parchaaion K Baad Khula

                        Ajab Talism  e  Khamooshi Tha Ghr Ka Sannaata

                                           Jo Baam  o Dar Ki Shehnaaio K Baad Khula

                  Mai A aab  o  Khaak Say Manoos Tha, Par Kia Tha

                                                 Dar  e  Qafas Miri benaaion K Baad Khula

                                       Mujahy Ye Jang bahr Haal Jeetni Thi Magar

                                            Naya Mahaaz Hi Paspaaion K Baad Khula 

           Mujhay Bhi Tangi  e  Afaaq Ka Gila Hay SALEEM

                Yeh Bhaid Mujh Pe Bhi Gehraaion K Baad Khula

                                                                     Poet:Saleem Kousar

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -