منصوبہ بندی کے تحت بچوں کی تعلیم کو نقصان پہنچایا جارہا ہے، خرم شیر

منصوبہ بندی کے تحت بچوں کی تعلیم کو نقصان پہنچایا جارہا ہے، خرم شیر

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر) پاکستان تحریک انصاف کراچی کے صدر و رکن سندھ اسمبلی خرم شیر زمان نے انصاف ہاوس میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ صوبے میں لاک ڈاؤن کے نتیجے میں معیشت کا نقصان ہوا ہے۔ اب ایک منظم منصوبہ بندی کے تحت بچوں کی تعلیم کو نقصان پہنچایا جارہا ہے۔ پیپلز پارٹی نے تعلیم کی وزارت پر ایک بار پھر سردار شاہ کو مسلط کردیا ہے۔ انیل کپور کو رات میں خواب آتا ہے اور اگلے دن بیان بدل دیتے ہیں۔ اس موقع پر ان کے ہمراہ پرائیویٹ اسکول ایسوسیشن کے سربراہ سید طارق شاہ، رکن سندھ اسمبلی رابعہ اظفر نظامی،پی ٹی آئی رہنما سمیر میر شیخ سمیت دیگر رہنماموجود تھے۔ خرم شیر زمان نے مزید کہا کہ 39 فیصد اساتذہ کہ ویکسینیشن مکمل ہوچکی ہے،یہ اعداد سیکرٹری تعلیم کے ہیں۔شہر میں جلسے ہوسکتے ہیں،مراد علی شاہ عید پر اپنے حلقوں میں محفلیں سجا سکتے ہیں، مگر صوبے کے اسکول نہیں کھول سکتے۔180دن اسکول کھولنے چاہئے مگر 62 دن اسکول کھولے گئے۔ سندھ حکومت صوبے کے عوام کو تعلیم سے محروم رکھنا چاہتی ہے۔ دیہی علاقوں میں چیٹنگ کا دستور عام ہے۔70فیصد بچے سرکاری اسکولوں میں پڑھتے ہیں۔سندھ کے سرکاری اسکولوں میں آن لائن کا کوئی نظام موجود نہیں ہے۔ 45 لاکھ بچوں کو تعلیم سے محروم کردیا ہے۔سندھ میں پرائمری اسکولوں کی کتابیں چھپی ہیں، سیکنڈری جماعتوں کیلئے کتابیں نہیں چھاپی گئیں۔37 ہزار اساتذہ کے بھرتیوں کی ضرورت ہے، بچوں کے والدین ہمیں کال کررہے ہیں۔سندھ حکومت والدین کو احتجاج کرنے پر مجبور کررہی ہے۔277 ارب تعلیم کا بجٹ ہے 70 فیصد بجٹ تنخواہوں میں رکھا گیا ہے۔ انیل کپور وفاق کی نفرت میں ہمیشہ غلط فیصلے کرتے ہیں۔ہمیں بچوں کے مستقبل کی فکر ہے۔بلاول زرداری کو سندھ کے بچوں کی تعلیم کی کوئی پرواہ نہیں ہے۔ خرم شیر زمان نے مزید کہا کہ پی ٹی آئی تعلیم کے معاملے پر ہر فارم پر احتجاج کرے گی۔

مزید :

صفحہ آخر -