چین اور جاپان کو شمالی کوریا کے ایٹمی مسئلے بارے مشترکہ موقف کا اعادہ کرناچاہئے

چین اور جاپان کو شمالی کوریا کے ایٹمی مسئلے بارے مشترکہ موقف کا اعادہ ...

بیجنگ (آئی این پی ) جنوبی کوریا کے صدر مون جائی ۔ان نے ہفتے کو چین کا چار روزہ سرکاری دورہ مکمل کر لیا جو کہ مئی میں صدر کا منصب سنبھالنے کے بعد چین کا پہلا دورہ ہے ، اس دورے کے دوران انہوں نے سیؤل اور بیجنگ کے درمیان تعلقات بہتر بنانے کی کوشش میں شمالی کوریا کے بارے میں تبادلہ خیال کرنے کیلئے چینی ہم منصب شی جن پھنگ اور دوسرے اعلیٰ حکام سے ملاقاتیں کیں ، شی کے ساتھ گذشتہ جمعرات کو اپنی ملاقات میں انہوں نے شمالی کوریا پر علاقے میں کشیدگی میں تیزی سے اضافہ کرنے کا الزام لگاتے ہوئے جنوبی کوریا ۔چین تعلقات میں ’’نئے آغاز کی ضرورت ‘‘ پر زوردیا ۔انہوں نے چینی صدر کو بتایا کہ مجھے امید ہے کہ ہم شمالی کوریا کے جوہری مسئلے جس نے نہ صرف شمال مشرقی ایشیاء بلکہ پوری دنیا میں امن و سلامتی کیلئے خطرہ لاحق کر دیا ہے کو پرامن طورپر حل کرنے کیلئے دونوں ممالک کے مشترکہ موقف کا اعادہ کریں گے اور تعاون کیلئے مخصوص طریقوں پر غور و خوض کریں گے۔چینی صدر نے کہا کہ چین اور جنوبی کوریا کے تعلقات کو جو دھچکا لگا ہے ، اس کی وجہ توہم سب اچھی طرح جانتے ہیں، انہوں نے سربراہی اجلاس کے دوران تھاڈ کی اصطلاح استعمال کرنے سے گریز کیا ۔

انہوں نے کہا کہ مجھے امید ہے کہ جنوبی کوریا کے صدر کا دورہ باہمی احترام اور اعتماد کی بنیاد پر بہتر راستہ اختیار کر کے اپنے تعلقات کو بہتر بنانے کیلئے ہمارے لئے اہم موقع ہو گا ۔

مزید : عالمی منظر