بچے لاپتہ ہیں، آئی جی سندھ فکر مند نظر نہیں آرہے،سندھ ہائی کورٹ

بچے لاپتہ ہیں، آئی جی سندھ فکر مند نظر نہیں آرہے،سندھ ہائی کورٹ

کراچی(آن لائن )سندھ ہائی کورٹ نے شہر بھر سے 20 سے زائد بچوں کی گمشدگی کے حوالے سے کیس کی سماعت میں انسپکٹر جنرل (آئی جی) سندھ پولیس اللہ ڈنو خواجہ اور سندھ حکومت سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔گمشدہ بچوں کے حوالے سے 2012 میں دائر کیے گئے اس کیس کی سماعت کے آغاز میں عدالت نے آئی جی سندھ کی جانب سے جواب داخل نہ کرانے پر ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل سندھ کی سرزنش کی۔عدالت عالیہ کے جسٹس نعمت اللہ نے کہا کہ سندھ سے بچے لاپتہ ہیں جبکہ اس معاملے میں آئی جی سندھ فکر مند نظر نہیں آرہے۔جسٹس نعمت اللہ نے کہا کہ 11 بجے تک آئی جی سندھ اپنا جواب داخل کرائیں اور ایسا کرنے میں ناکام ہوجاتے ہیں تو پھر خود عدالت میں حاضر ہوں۔ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل نے عدالت کو بتایا کہ انہوں نے آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ کو عدالتی احکامات سے آگاہ کردیا تھا۔ان کا کہنا تھا کہ آئی جی سندھ نے بچوں کی گمشدگی کے حوالے سے ا بھی تک نہ ہی تحقیقات کے لیے اعلیٰ سطح کا افسر مقرر کیا نہ ہی اس معاملے میں جواب داخل کرایا۔کراچی میں بچوں کی فلاح و بہبود کے لیے کام کرنے والی غیر سرکاری تنظیم روشنی ٹرسٹ کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ شہر سے تقریباً 20 سے زائد بچے لاپتہ ہوچکے ہیں۔وکیل روشنی ٹرسٹ کا کہنا تھا کہ لاپتہ یا گمشدہ بچوں کی بازیابی کے حوالے سے تاحال کوئی طریقہ کار وضح نہیں کیا گیا ، انہوں نے مطالبہ کیا کہ لاپتہ بچوں کو بازیاب کرایا جائے۔بعدِ ازاں سندھ ہائی کورٹ میں سماعت کچھ دیر کے لیے ملتوی کردی گئی۔لاپتہ بچوں کی گمشدگی پر عدالت کے اظہارِ برہمی کے بعد سماعت کے دوبارہ آغاز کے ساتھ ہی سینئر سپرنٹنڈنٹ پولیس مقدس حیدر نے آئی جی سندھ کی جانب سے جواب جمع کرادیا۔مقدس حیدر نے عدالت میں بتایا کہ پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے لاپتہ ہونے والے 4 بچوں کو بازیاب کرالیا 7 بچوں کی گمشدگی پر مقدمات درج کرلیے گئے ہیں دیگر لاپتہ بچوں کی تلاش یا بازیابی کے لیے ٹھوس اقدامات کیے جارہے ہیں۔جسٹس نعمت اللہ نے کہا ’ہمیں کچھ نہیں معلوم گمشدہ بچوں کی تلاش کی جائے کیونکہ شہر بھر سے اتنے بڑی تعداد میں بچے لاپتہ ہیں، یہ ہمارے لیے لمحہ فکر یہ ہے۔‘سندھ ہائی کورٹ نے حکم جاری کرتے ہوئے کہا کہ سندھ حکومت بھی لاپتہ بچوں کی تلاش یا بازیابی کے لیے موثر اقدامات کرے۔عدالت عالیہ نے آئی جی سندھ اور حکومتِ سندھ سے اس معاملے میں پیش رفت رپورٹ طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت غیر معینہ مدت تک کے لیے ملتوی کردی۔

مزید : صفحہ آخر