نوشہرہ کا لج آف ٹیکنالوجی کے طلباء کی جانب سے فیسوں میں اضافہ مسترد

نوشہرہ کا لج آف ٹیکنالوجی کے طلباء کی جانب سے فیسوں میں اضافہ مسترد

نوشہرہ(بیورورپورٹ)نوشہرہ کالج آف ٹیکنالوجی کے طلباء نے بورڈ آف ٹیکنیکل ایجوکیشن میں بورڈ آف گورنرز کی طرف سے فیسوں میں اضافے کو یکسر مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ بورڈ آف ٹیکنیکل ایجوکیشن کا بورڈ آف گورنر فیسوں میں اضافے کے فیصلے پر نظرثانی کریں بصورت دیگر نوشہرہ کالج آف ٹیکنالوجی کے طلباء بورڈ آف ٹیکنیکل ایجوکیشن کے ذمہ داروں اور بورڈ آف گورنر کے خلاف دما دم مست قلندر پر مجبور ہوجائیں گے اس سلسلے میں جمعیت طلباء اسلام نوشہرہ کالج آف ٹیکنالوجی کے صدر عاصم خان کی زیر قیادت فیسوں میں اچانک بے تحاشہ اضافے کے خلاف ایک زبردست احتجاجی جلوس نوشہرہ کنڈر کالج سے شوبرا چوک پہنچا مظاہرین کی قیادت جمعیت طلباء اسلام کنڈر کالج کے صدرعاصم خان اسلامی جمعیت طلباء کے صدر ملک ذوالقرنین، پختون سٹوڈنٹ فیڈریشن کے صدر شہاب اللہ اور عادل فہد کررہے تھے مظاہرین نے بینرز اور پلے کارڈ اٹھارکھے تھے جس پر بورڈ آف ٹیکنیکل ایجوکیشن کے بورڈ آف گورنر کے خلاف فیسوں میں اچانک بے تحاشہ اضافے کے خلاف نعرے درج تھے جلوس کے شرکاء مظاہرین شوبرا چوک پہنچے تو جلوس نے جلسے کی شکل اختیار کردی مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہا کہ بورڈ آف ٹیکنیکل ایجوکیشن کے بورڈ گورنر نے فیسوں میں بے تحاشہ اضافہ کرکے غریب طلباء کی کمر توڑ دی اور غریب طلباء پر ٹیکنیکل تعلیم اور جدید کمپیوٹر کے کورسسز کے دروازے بند کرنے کی سازش شروع کی ہے جو ہم کسی صورت کامیاب نہیں ہونے دیں گے انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ اگر حکومت نے فیسوں میں اضافے کے فیصلے کو واپس نہ لیا تو ہم ایک ہفتے کے بعد ضلع بھر کے روڈز کو بلاک کرنے پر مجبور ہوجائیں گے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر