53 سالہ وکیل کی شادی لیکن دلہن کی عمر کتنی تھی؟ اتنی کم کہ کوئی مرد سوچ بھی نہیں سکتا ، پولیس حرکت میں آگئی کیونکہ۔۔۔۔۔

53 سالہ وکیل کی شادی لیکن دلہن کی عمر کتنی تھی؟ اتنی کم کہ کوئی مرد سوچ بھی ...
53 سالہ وکیل کی شادی لیکن دلہن کی عمر کتنی تھی؟ اتنی کم کہ کوئی مرد سوچ بھی نہیں سکتا ، پولیس حرکت میں آگئی کیونکہ۔۔۔۔۔

  

ممبئی (نیوز ڈیسک) بھارت خواتین کے ساتھ جنسی جرائم کے حوالے سے پوری دنیا میں سر فہرست ہے، اور کیوں نا ہو؟ جب کسی ملک میں ہائیکورٹ کی وکالت کے مرتبے پر فائز لوگ بھی کم عمر لڑکیوں کی عصمت دری میں ملوث پائے جائیں تو وہاں خواتین کی عزت کا تحفظ کون کرے گا؟

اگرچہ یہ بھیانک انکشاف ناقابل یقین لگتا ہے لیکن شرمناک سچ یہی ہے کہ ممبئی ہائیکورٹ کا ایک ادھیڑ عمر وکیل 15 سالہ بچی کی عزت پامال کرنے کے جرم میں گرفتار کر لیا گیا ہے۔ ٹائمز آف انڈیا کے مطابق اس بدبخت شخص نے 2015 میں اس وقت لڑکی کو زبردستی اپنی بیوی بنا لیا جب وہ نویں کلاس کی طالبہ تھی۔

رپورٹ کے مطابق لڑکی کا تعلق ایک غریب خاندان سے ہے اور وہ اپنے والدین کے ساتھ گاﺅں میں رہائش پزیر تھی۔ اس کا والد بے روزگار تھا اور ماں شدید بیمار تھی۔ اس صورتحال کا فائدہ اٹھاتے ہوئے 53 سالہ وکیل نے اس کے دادا، دادی سے رابطہ کیا اور انہیں چھ ایکڑ زمین کا لالچ دے کر ان کی کم عمر پوتی سے شادی کر لی۔

لڑکی کی شدید مزاحمت کے باوجود وہ اسے شہر لے آیا اور اپنے گھر میں قید کر لیا۔ حیوان صفت وکیل خود ایک 15 سالہ بیٹی کا باپ ہے لیکن اس کے باوجود زبردستی بیوی بنائی گئی نوعمر لڑکی کو ہر روز زیادتی کا نشانہ بناتے ہوئے اسے کبھی شرم محسوس نہیں ہوئی۔صرف یہی نہیں بلکہ وہ لڑکی کو جسمانی تشدد کا نشانہ بھی بناتا تھا۔ چند دن قبل لڑکی موقع پا کر اس کے گھر سے فرار ہو گئی اور پولیس کو مطلع کر دیا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ملزم کو گرفتار کر لیا گیا ہے اور اس کے خلاف قانونی کاروائی جاری ہے۔ پولیس لڑکی کو زبردستی وکیل کے حوالے کرنے والے اس کے دادا، دادی کو بھی تلاش کر رہی ہے تاہم وہ روپوش ہو گئے ہیں۔

مزید : بین الاقوامی