پیدا ہونے والا بچہ سیدھے ہاتھ سے لکھتا ہو گا یا اُلٹے سے ، حمل کے دوران ہی ماں کی اِس چیز سے معلوم ہو جاتا ہے۔۔۔ سائنسدانوں نے انتہائی حیران کن انکشاف کر دیا

پیدا ہونے والا بچہ سیدھے ہاتھ سے لکھتا ہو گا یا اُلٹے سے ، حمل کے دوران ہی ماں ...
 پیدا ہونے والا بچہ سیدھے ہاتھ سے لکھتا ہو گا یا اُلٹے سے ، حمل کے دوران ہی ماں کی اِس چیز سے معلوم ہو جاتا ہے۔۔۔ سائنسدانوں نے انتہائی حیران کن انکشاف کر دیا

  

روم(مانیٹرنگ ڈیسک) اب تک تو بچے کی پیدائش کے بعد ہی اندازہ ہو پاتا تھا کہ وہ سیدھے ہاتھ سے کام لیا کرے گا یا الٹے ہاتھ سے، لیکن اب اطالوی سائنسدانوں نے نئی تحقیق میں حیران کن طور پر انکشاف کیا ہے کہ اس بات کا پتہ ماں کے پیٹ میں ہی چلایا جا سکتا ہے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ ”جب خاتون کا حمل 18ہفتے کا ہو جائیں تو اس کے سکین بچے کے دائیں یا بائیں ہاتھ کے غالب ہونے کی 100فیصد یقینی نشاندہی کر سکتے ہیں۔“

اس تحقیق میں انٹرنیشنل سکول فار ایڈوانسڈ سٹڈیز، ٹریسٹے کے سائنسدانوں نے 10سال قبل 29حاملہ خواتین کے سکین لے کر ان کا تجزیہ کیا۔ ان کے سکین حمل کے 18ویں سے 21ویں ہفتے کے دوران لیے گئے۔سائنسدانوں 20منٹ تک الٹراساﺅنڈ سکین کے ذریعے ان کے بچے کی حرکات کا مشاہدہ کرتے رہے۔ ان حرکات سے انہوں نے آئندہ زندگی میں بچوں کے سیدھے یا الٹے ہاتھ سے لکھنے اور دیگر کام کرنے کا اندازہ لگایا۔ اب 10سال بعد انہوں نے ان ماﺅں کے ہاں پیدا ہونے والے بچوں کا ڈیٹا اکٹھا کیا، تو معلوم ہوا کہ انہوں نے ان کے متعلق جو اندازہ لگایا تھا وہ 100فیصد درست تھا۔ ماں کے پیٹ میں بچوں کی حرکات دیکھ کر انہوں نے جس بچے کے متعلق جو پیش گوئی کی تھی وہ بالکل درست ثابت ہوئی۔یہ تحقیقاتی رپورٹ سائنٹیفک رپورٹ نامی جریدے میں شائع ہوئی۔

مزید : ڈیلی بائیٹس