پی ایس ڈی ایف کا خواتین انٹرپریونرزکو با اختیار بنانے کا عزم

پی ایس ڈی ایف کا خواتین انٹرپریونرزکو با اختیار بنانے کا عزم

  

کراچی(پ ر) صوبہ بھر سے PSDFکی خواتینگریجویٹسنے اس ڈیجیٹل دور میں از خود اور آن لائن شرکت کر کے self-employment کی اپنی کامیابیوں کی طرف گامزن اقدامات کی تقریب منائی۔ تقریب میں 100 خواتین نے PSDF  کے آن لائن کورسز سے گریجویشن حاصل کیجو ان کو ڈیجیٹل معیشت کے لئے بااختیار بنانے کے لئے ڈیزائن کیا گیا ہے۔ تقریب میں مہمان خصوصی کے طور پر وفاقی پارلیمانی سیکرٹری برائے امور خارجہ اور رکن قومی اسمبلی (ایم این اے) عندلیب عباس موجود تھیں۔UNWomen کے ذریعہ کی جانے والی ایک تحقیق میں خواتین کی زندگی پر وبائی مرض کے شدید منفی اثرات کو اجاگر کیا گیا ہے اور پاکستان میں خواتین کومالی استحکام فراہم کرنے کے اقدامات میں اضافے کی سفارش کی گئی ہے۔ وبائی مرض کے ذریعہ پیش آنے والے چیلنجز کی روشنی میں (ملازمتوں اور آمدنی میں کمی سمیت) PSDF نے خواتین کے لئے آمدنی کے مواقع بڑھانے کے لیے خصوصی طور پر ڈیزائن کردہ آن لائن کورسز کا آغاز کیا۔جواد خان، سی ای او،PSDF نے ورک فورس کے لئے خواتین کی ضروری ممبر شپ کے بارے میں کہا''ٹریننگ کے نتیجے میں پائیلٹ پراجیکٹس کو پائیدار معاشی کامیابی کے ساتھ صوبے بھر میں زبردست ردعمل اس بات کا ثبوت ہے کہ مناسب مواقع ملنے پر خواتین گھروں کی آمدنی میں بڑے پیمانے پر حصہ ڈال سکتی ہیں۔ اس کوشش میں، PSDFنے ایک فرنٹ لائن کردار ادا کیا ہے، جس نے پچھلے 10 سالوں میں 178,000 سے زیادہ خواتین کو گریجویشن کرائی ہے۔ انہوں نے مزید کہاکہ PSDF نے متعدد شعبوں میں ڈیجیٹل، برک اور ہائبرڈ ماڈلز میں خواتین کی تربیت کے پورٹ فولیو کو مستقل طور پر بڑھانے کے عزم کا اعادہ کیا۔"وفاقی پارلیمانی سکریٹری برائے امور خارجہ اور رکن قومی اسمبلی عندلیب عباس نے  PSDF کےURAAN برانڈکے ماتحت گر یجویٹس کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا کہ“یہ لمحہ ہر عورت کے لئے باعث فخر ہے۔ پنجاب بھر میں خواتین کو بااختیار بنانے کے لئےPSDF کی تعریف کرنا چاہتی ہوں جہاں اس طرح کے پروگرامزکے ذریعے اب خواتین پہلے سے کہیں زیادہ قابل بن جائیں گی۔ اب وہ گھر میں رہ کر آن لائن سکلزسیکھ کرپاکستان کی ڈیجیٹل معیشت میں ایک اہم کردار ادا کرسکتی ہیں۔"

مزید :

صفحہ آخر -